آئی ایم ایف نے پاکستان پر مزید سخت شرائط عائد کردی

اسلام آباد: آئی ایم ایف کی مزید شرائط سامنے آ گئیں۔حکومت کو آئندہ پانچ ماہ میں آئی ایم ایف کی مزید 6 شرائط پوری کرنا ہوں گی۔آئی ایم ایف نے اپنی شرائط میں مزید بجلی کی قیمتیں بڑھانے کا مطالبہ بھی کیا ہے۔

آئی ایم کی شرائط کے مطابق حکومت کو آئندہ پانچ ماہ میں آئی ایم ایف کی مزید 6 شرائط پوری کرنا ہوں گی۔ آئی ایم ایف کے مطابق حکومت سرکاری ملکیتی اداروں کے حوالےسے قانون سازی کرے۔ حکومت پاکستان بجلی کے گھریلو صارفین کو دی گئی سبسڈی ختم کرے۔

آئی ایم ایف کی شرائط میں کہا گیا ہے کہ حکومت پبلک پروکیورمنٹ اتھارٹی کے نئے ضوابط جاری کرے۔ حکومت پرسنل انکم ٹیکس بڑھانے کیلئے اقدامات کرے۔ اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی ایکسپورٹرز اور کاروباری افراد کو دی گئی مراعات کا ازسر نو جائزہ لیا جائے،

آئی ایم ایف کی پاکستان سے متعلق جاری کی گئی کنٹری رپورٹ میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ ایف بی آر انکم ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کیلئے اقدامات کرے۔ آئندہ مالی سال ایف بی آر کیلئے 1155ارب روپے کے اضافی ٹیکس کی تجویز بھی دی گئی ہے ۔

رپورٹ میں آئندہ مالی سال کے لیے ایف بی آر ٹیکس ہدف 7255 ارب روپے جبکہ پیٹرولیم لیوی کی مد میں406 ارب روپے کی وصولیوں کی تجویز دی گئی ہے۔براہ راست ٹیکسوں کی مد میں 2711ارب روپے اور سیلز ٹیکس کی مد میں 3295 ارب روپے وصولی کی تجویز ہے۔

رپورٹ میں کسٹمز ڈیوٹی کی مد میں 843 ارب روپے وصولیوں کا تخیمنہ لگایا گیا ہے ۔ آئندہ مالی سال وفاقی ترقیاتی پروگرام کے لیے 559 ارب روپے مختص جبکہ دفاع پر 1586 ارب روپے خرچ کرنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے ۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More