مرتضیٰ وہاب کو سپریم کورٹ میں غصہ مہنگا پڑگیا

کراچی سپریم کورٹ رجسٹری میں گٹر باغیچہ کیس میں عدالت نےبڑا حکم دے دیا،،مرتضیٰ وہاب کو عدالت میں غصہ مہنگا پڑگیا، سپریم کورٹ سخت الفاظ استعمال کرنے پر مرتضی وہاب پر برہم ہوگئی، سپریم کورٹ کا وزیر اعلی سندھ کو مرتضی وہاب کو فوری عہدے سے ہٹانے کا حکم دے دیا۔

سپریم کورٹ نے مرتضیٰ وہاب کی غیر مشروط معافی قبول کرلی،سپریم کورٹ کا ایڈمسنٹریٹر کے عہدے کو سیاست سے دور رکھنے کا حکم دے دیا۔

سپریم کورٹ نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ یہ ریاست کی زمینیں ہیں آپ کی ذاتی ملکیت نہیں واپس کرنا ہوگی ساری زمینیں۔ ہم نہیں لیں گے تو کوئی اور آکر لے گا، آپ واپس کریں گے زمینیں۔

مرتبہ وہاب نے عدالت میں کہا کہ اوپن کورٹ میں حکومت کے خلاف بڑی بڑی آبزوئشن پاس کردی جاتی ہے، ہم کیا چلے جاہیں حکومت چھوڑدیں۔ جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ مسٹر چپ کریں کیا بات کررہے ہیں سیاست نہیں کریں یہاں،جائیں یہاں سے نکل جائیں ، ابھی آپ کو فارغ کردیتے ہیں، آپ ایڈمنسٹریٹر ہیں یا سیاسی رہنما ؟ ایڈمنسٹریٹر کو شہریوں کی خدمت کیلئے رکھا جاتا ہے تاکہ غیر جانبداری سے کام کرے ، ایڈمنسٹریٹر کا عہدہ سیاست کیلئے نہیں ہوتا ہے ، بادی النظر میں ایڈمنستڑیٹر اپنے فرائض انجام دینے میں ناکام رہے ، ایڈمسنٹریٹر کا رویہ سیاسی رہنمائوں کا ہے شہریوں کی سروس کا نہیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More