شیخ رشید کی عبوری ضمانت میں چھ جون تک توسیع

لاہور ہائیکورٹ راولپنڈی بینچ نے سابق وزیر داخلہ شیخ رشید کے خلاف مسجد نبوی واقعہ سے متعلق درج مقدمات میں عبوری ضمانت میں چھ جون تک توسیع کر دی ۔ عدالت نے شیخ رشید کو ہراساں اور گرفتار نہ کرنیکا حکم بھی دیدیا ۔شیخ رشید کہتے ہیں سپریم کورٹ فیصلے کے بعد شہباز حکومت ایک ووٹ پر کھڑی ہے۔ نگران وزیر اعظم کے انٹرویو شروع ہوچکے ہیں ۔ اکتیس مئی تک نگراں سیٹ اپ کا فیصلہ ہوجائیگا ۔

ہائیکورٹ راولپنڈی بینچ کے جسٹس امجد رفیق نے شیخ رشید کی عبوری ضمانت میں توسیع کی درخواست پر سماعت کے بعد استدعا منظور کر لی جبکہ دونوں مقدمات کا مکمل ریکارڈ بھی طلب کرلیا۔ وکیل صفائی سردار عبدالرازق ایڈوکیٹ کا موقف تھا کہ پاکستان سے باہر کسی بھی واقعہ کی ایف آئی آر پاکستان میں درج نہیں ہوسکتی یہ مقدمات جھوٹے بے بنیاد سیاسی انتقام ہیں سابق وزیر کا اس سے کوئی تعلق نہیں۔

شیخ رشید کے خلاف گیارہ شہروں میں توہین مذہب کے درج مقدمات کے اخراج کیلئے دائر درخواست پر سماعت کیلئے عدالت نے پچیس مئی کی تاریخ مقرر کردی ۔ عدالت نے شیخ رشید کی ان مقدمات میں عبوری ضمانت میں چھ جون تک توسیع کرتے ہوئے انہیں ہراساں اور گرفتار نہ کرنیکا حکم بھی دیا ہے ۔

سماعت کے بعد میڈیا سے گفتگو میں شیخ رشید کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ فیصلے کے بعد شہباز حکومت ایک ووٹ پر کھڑی ہے۔ یہ اداروں سے ایک سال کی حکومت کے لئے بھیک مانگ رہے ہیں۔ اکتیس مئی تک نگراں سیٹ اپ کا فیصلہ ہوجائیگا ۔ جب بھی حالات کٹھن ہوتے ہیں اتحاد ٹوٹ جاتے ہیں۔ شیخ رشید کے مطابق رات بارہ بجے عدالت کھولنا بھی انکے حق میں چلا گیا۔ بولے ہمیں عدالتوں اور فوج کے احترام کا خاص خیال ہے۔ ایف آئی اے کے ذریعے حمزہ، شہباز شریف، آصف زرداری اور فریال تالپور کے کیسز لپیٹنے کی تیاریاں ہورہی ہیں۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ووٹ کی عزت بحال کرنے کا مطالبہ کرنیوالوں نے ووٹ کا ریٹ بیس کروڑ رکھا۔ بیس مئی کو ملتان جلسہ میں عمران خان لانگ مارچ کی کال دیں گے۔ بہتر ہے اس سے قبل الیکشن کی تاریخ دیدی جائے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More