سپریم کورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی درخواست نمٹا دی

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی درخواست نمٹا دی ۔ سپریم کورٹ نے عمران خان کے خلاف کارروائی کی اجازت دینے کی حکومتی درخواست مسترد کردی۔ تحریری فیصلہ بعد میں جاری کیا جائے گا۔

چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس اعجاز الاحسن، جسٹس منیب اختر، جسٹس یحییٰ آفریدی اور جسٹس مظاہر علی نقوی پر مشتمل بینچ نے درخواست پر سماعت کی۔

چیف جسٹس پاکستان نے سماعت کے آغاز پر کہا کہ اٹارنی جنرل صاحب سب سے پہلے آپ کو سننا چاہتے ہیں، جس کے بعد اٹارنی جنرل نے گزشتہ روز کا حکم نامہ پڑھ کر سنایا، سپریم کورٹ میں عمران خان کے گزشتہ روز کا خطاب بھی چلایا گیا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ ممکن ہے کہ عمران خان کو غلط بتایا گیا ہو،سپریم کورٹ نے آئینی حقوق کا تحفظ کرنا ہے،ہمارے علم میں آیا ہے کہ جگہ جگہ آگ لگائی گئی، جلاؤ گھیراؤ کیا گیا، ہمیں یہ بھی معلوم ہے کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے مسلسل شیلنگ کی ۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ پاکستان کی عوام کو آئین کے آرٹیکل 15 ، 16 اور 17 کے تحت حقوق حاصل ہیں ،ایگزیکیٹو کوئی بھی غیر آئینی گرفتاریاں اور ریڈز نہ کریں، یہ مت بھولیں کہ اسی جماعت نے متعدد ریلیاں کی ہیں ۔

اٹارنی جنرل نے عدالت میں بتایا کہ پی ٹی آئی کی ان ریلیوں کو مکمل سیکیورٹی فراہم کی گئی تھی، چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیئے کہ پی ٹی آئی کو پاکستان کی عوام کی طرف اپنی ذمہ داریوں کو سمجھنا چاہیے،پی ٹی آئی کو مثال بننا چاہیے تھا، ایسے چلتا رہا تو صورتحال مزید بگڑ جائے گی ۔

چیف جسٹس پاکستان نے اٹارنی جنرل سے سوال کیا کہ کل کتنے افراد زخمی ہوئے، جواب دیا گیا 31 پولیس افسران زخمی ہوِئے، چیف جسٹس نے کہا کہ عام عوام بھی زخمی ہوِئے ہونگے ، ہجوم بہت چارجڈ تھا، یہ لوگ بغیر قیادت کے تھے۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ اسلام آباد میں گرین بیلٹس کو آنسو گیس سے بچنے کے لئے جلایا جا رہا تھا، صورتحال کو صرف پی ٹی آئی کی لیڈر شپ ہی کنٹرول کر سکتی تھی، کل جو ہوا افسوس ناک ہے، کل جو ہوا اس سے عدالت کا سیاسی جماعتوں پر اعتماد ٹوٹا ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ موجودہ کیس میں عدالت نے عوام کے تحفظ کے لئے حکم دیا تھا، سیاسی جماعتوں کو مذاکرات کا حکم بھی دیا گیا تھا، موجودہ کیس میں ہم نے اپنی حد سے آگے جا کر حکم دیا،عدالت نے عوام کے تحفظ کے لئے حکم دیا تھا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں مزید کہا کہ کیس کا حکم نامہ جاری کریں گے جو مستقبل کے لئے مثال بنے، سپریم کورٹ نے حکومت اور اسلام آباد ہائیکورٹ بار کی درخواستیں نمٹا دیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More