بلدیاتی نظام پر تنقید کرنے والے پہلے اپنے گریبان میں جھانکیں، سعید غنی

کراچی: وزیر اطلاعات سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہ سندھ میں مقامی اور غیر مقامی کی بات نہیں ہونی چاہیے، بلدیاتی نظام پر تنقید کرنے والے پہلے اپنے گریبان میں جھانکیں، سمجھ نہیں آتی یہ کیا اختیارات مانگنا چاہتے ہیں، ہم کسی احتجاج سے پریشان نہیں۔

کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سعید غنی نے کہا کہ بلدیاتی قانون میں ترمیم سے بلدیاتی حکومتوں کے اختیارات میں اضافہ ہوا ہے۔ ترمیم کرکے سالڈ ویسٹ کا چیئرمین میئر کوبنا دیا۔ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اور واٹر بورڈ میں میئر کو اختیار دے دیا۔ اسمبلی میں سارا تماشہ پی ٹی آئی نےلگایا، ایم کیوایم وہاں نہیں تھی۔

سعید غنی نے کہا کہ یہ کہنا کونسا غلط ہے کہ اپوزیشن اکثریت میں نہیں ہے۔ تنقید کرنے والوں کو ان پڑھ کہو تو انہیں بات بری لگتی ہے۔

انھوں نے کہا کہ ٹاؤنز بنانے کا مطالبہ اپوزیشن نے کیا ہم نے بنادیے۔ واٹر بورڈ کی چئیرمین شپ میں بھی مئیر کو شراکت دے دی۔ بار بار ٹی وی پر آکر کہتے تھے مجھے تو کچرا اٹھانے کا بھی اختیار نہیں۔ 2002 میں بھی کچرا اٹھانے کا اختیار میئر کے پاس نہیں تھا۔ میئر کا کام کچرا اٹھانا نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ پراپرٹی ٹیکس جمع کرنے کا اختیار ٹاؤنز کو دے دیا گیا۔

سعید غنی نے کہا کہ لسانی فسادات کی سازش ہورہی ہے، مجھے پریشان ہونا چاہیے۔ مردم شماری پر ہم آخر تک لڑتے رہے، ایم کیو ایم حکومت میں تھی، پتا نہیں کیا معاملہ طےکیا۔ ہم ان کے احتجاج اور شور سے بالکل بھی پریشان نہیں۔ کراچی سے قومی اسمبلی میں متحدہ کی 3 اور ہماری 4 سیٹیں ہیں۔ جو انداز اپنایا جارہا ہے وہ مناسب نہیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More