صدارتی نظام سے پاکستان ٹوٹ جائے گا، مولانا فضل الرحمان

لیہ: سربراہ جمیعت علماء اسلام مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ صدارتی نظام کا مقصد ڈکیٹرشپ ہے۔ صدارتی طرز حکومت نہیں چل سکتی یہ جبر کی علامت ہے۔

لیہ میں تحفظ آئین پاکستان کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اپوزیشن اتحاد پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ صدارتی نظام کو لانے کی باتیں ہو رہی ہیں جس سے ملک دولخت ہو جائے گا۔صدارتی نظام کا مقصد ڈکیٹرشپ ہے۔ صدارتی طرز حکومت نہیں چل سکتی یہ جبر کی علامت ہے۔


مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اگر سرائیکی صوبہ بنتا ہے تو اس کا حق یہاں کے بچوں کا ہوگا۔آئین وہ نقطہ ہے جس نے قوم کو ایک قوم بنایا ہوا ہے جس نے آئین کو چھیڑا وہ پاکستان کے ٹوٹنے کا ذمہ دار ہو گا۔کوئی آمر اقتدار پر قبضہ نہیں کر سکتا ہے۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ایسی نالائق حکومت جس کے نزدیک سال میں بارہ موسم ہیں ۔ سال میں چاربار بجٹ پیش کرنے والی پہلی نالائق حکومت ہے۔افغانی روپے کی قدر بھی پاکستانی روپے سے زیادہ ہے ۔ آج ملک میں بھوک ہے۔ ماں باپ بچوں کو ذبح اور فروخت کرنے پر مجبور ہیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More