امریکہ اور بھارت کی نظریں پاکستان پر

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کے دورہ روس اور ممکنہ نتائج پر اس وقت امریکہ اوربھارت سمیت دنیا بھر کی نظریں جمی ہوئی ہیں ۔ عمران خان کے دورہ روس کے دوران افغانستان کے معاملے سمیت اہم علاقائی امور ، گیس پائپ لائن اور دفاعی شعبوں میں تعاون پر پیش رفت کا امکان ہے۔

وزیراعظم عمران خان کے دورۂ روس کو امریکہ اور بھارت میں خاص اہمیت دی جا رہی ہے۔ جس کی وجہ یوکرین تنازعہ اور افغانستان کی صورت حال ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق وزیراعظم کا ایسے وقت میں روس کا دورہ کرنا جب یوکرین تنازعہ کی وجہ سے امریکہ اور روس آمنے سامنے ہیں مناسب نہیں ہے۔ دوسری جانب حکومتی ترجمانوں کا کہنا ہے وزیراعظم کا دورہ دونوں ملکوں میں موجود ماضی کی تلخیوں کو ختم کرنے میں معاون ثابت ہوگا۔

توقع کی جا رہی ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کے دورہ ماسکو سے دونوں ملکوں کے درمیان اقتصادی اور تجارتی شعبوں میں تعاون کو فروغ ملے گا۔ اور روسی کمپنی کے کراچی سے قصور تک گیس پائپ لائن منصوبے پر اہم پیش رفت ہوگی۔ دورے میں افغانستان میں امریکی انخلاء کے بعد پیدا شدہ صورت حال بشمول انسانی بحران پربھی مفصل بات چیت ہوگی۔

وزیراعظم کے دورۂ روس کے دوران دیگر شعبوں کے علاوہ ریلوے اور انڈسٹری میں بھی تعاون کے معاہدوں پردستخط کا امکان ہے۔ عمران خان روسی صدر ولادی میر پیوٹن کو پاکستان کے دورے کی دعوت بھی دیں گے۔

واضح رہے دوہزاردس میں پاکستان اور روس ماضی کو بھلا کر باہمی تعلقات کی بہتری کی جانب گامزن ہوئے۔ دونوں ملکوں کے درمیان اعلیٰ سطح پروفود کے تبادلے اورفوجی سازوسامان کی خریداری پر کام شروع ہوا تھا۔ دوہزارسترہ میں پاکستان کی شنگھائی تعاون تنظیم میں شمولیت نے پاکستان اور روس کے تعلقات بہتر بنانے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More