نیوی سیلنگ کلب کو تین ہفتوں میں گرانے کا حکم

اسلام آباد ہائیکورٹ نے راول جھیل کے کنارے نیوی سیلنگ کلب کی تعمیر غیر قانونی قرار دے کرنیوی سیلنگ کلب کو تین ہفتوں میں گرانے کا حکم دیتے ہوئے عمل درآمد رپورٹ بھی طلب کرلی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے راول ڈیم کے کنارے نیوی سیلنگ کلب کی تعمیر پر محفوظ شدہ فیصلہ سنایا۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ پاک فوج کا اہم سٹیٹس ہے جس کا مینڈیٹ آئین میں بتایا گیا ہے،نیوی کا اختیار نہیں کہ ریئل اسٹیٹ وینچر کرے۔

ریئل اسٹیٹ بزنس کے لیے ادارے کا نام استعمال نہیں کیا جا سکتا،اتھارٹی کو اختیار نہیں تھا کہ نیوی کو این او سی جاری کرتی، پاکستان نیوی نے نیشنل پارک ایریا پر تجاوز کیا، سیلنگ کلب غیر قانونی ہے، نیوی سیلنگ کلب کی بلڈنگ تین ہفتوں میں منہدم کی جائے۔

سابق نیول چیف ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے غیر قانونی عمارت کا افتتاح کر کے اپنے آئین کی خلاف ورزی کی،عدالت نے غیر قانونی عمارت میں ملوث افراد کے خلاف مس کنڈکٹ اور فوجداری کارروائی کا حکم دے دیا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More