قومی اسمبلی کا اجلاس غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی

اسلام آباد: قومی اسمبلی اجلاس میں کورم ٹوٹنے اور مکمل ہونے کے بعد حکومت اور اپوزیشن کا جواب الجواب، وزیر خارجہ کہتے ہیں ہمارا چیلنج اپوزیشن نہیں مہنگائی ہے۔ عدالتوں پر اثر انداز ہونے کا بیانہ خطرناک ہے۔ احسن اقبال بولے ملک کو کوئی ایک پارٹی بحرانوں سے نہیں نکال سکتی۔ جامع حکومت ضروری ہے صدارتی نظام پر بحث کو غیر آئینی قرار دیدیا۔ پیپلز پارٹی کے آغا رفیع اللہ نے صدارتی نظام کے حق میں مہم کی تحقیقات کا مطالبہ کردیا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس پینل آف چیئر امجد نیازی کی صدارت میں شروع ہوا تو وزیر خارجہ نے او آئی سی وزرا خارجہ اجلاس کے لیے اسمبلی ہال استعمال کرنے کی تحریک پیش کی منظوری کے ساتھ ہی کورم ٹوٹنے پر اجلاس عارضی طور پر معطل کردیا گیا ۔

اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت اجلاس دوبارہ شروع ہوا تو شاہ محمود قریشی نے رانا شمیم کے بیان حلفی کے ذریعہ عدالتوں پر اثر انداز ہونے کے بیانیہ کو خطرناک قرار دیا۔ اپوزیشن کے شور کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہاکہ ہمارا چیلنج اپوزیشن نہیں مہنگائی ہے۔

احسن اقبال بولے وزیر خارجہ نے خود کو عمران خان کا متبادل کرکے پیش کیا ہے۔ حماد اظہر نے احسن اقبال کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ جب معیشت پر کہنے کو بات نہ ہو تو مطالعہ پاکستان کا لیکچر دیدیا جاتا ہے۔

جواب الجواب میں احسن اقبال بولے صدارتی نظام نے ملک کو دو لخت کیا، سیاسی جماعتیں اپنے سابق ادوار کا جواب دینے کے لئے ایوان میں موجود، ایوب، یحییٰ اور مشرف کا جواب کون دے گا؟ حماد اظہر نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ ایوب یحییٰ مشرف کا ذکر تو کیا لیکن جنرل ضیاء الحق کو بھول گئے۔

پیپلز پارٹی کے آغا رفیع اللہ نے اسپیکر اسمبلی سے صدارتی نظام بارے سے متعلق اشتہارات کی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ پتا لگایا جائے اس مہم کے پیچھے کون ہے۔

قبل ازیں توجہ دلاؤ نوٹس پر حماد اظہر کا کہنا تھا کہ سندھ میں مقامی گیس کی کمی کے باعث کراچی میں گیس کا بحران ہے۔ ایم کیو ایم کے سوالات پر بولے بل ادا نہ کرنے اور چوری کرنے والوں کو معاف نہیں کیا جائیگا۔ بعد ازاں قومی اسمبلی کا اجلاس غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردیا گیا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More