وفاقی کابینہ کا اجلاس،مفتاح اسماعیل کوسخت سوالات کا سامنا

اسلام آباد:وزیراعظم شہبازشریف کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل کو اراکین کی جانب سے سخت سوالات کا سامنا رہا۔

اجلاس میں وزیراعظم شہبازشریف نے وزیر خزانہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ مفتاح صاحب میں آپ کا دفاع نہیں کروں گا، ٹیکسوں اور تیل کی قیمتوں میں اضافے پر اراکین کو مطمئن کریں۔ مفتاح اسماعیل نے کہا پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا آئی ایم ایف سے کوئی تعلق نہیں، تیل کی قیمتوں میں اضافہ عالمی منڈی میں تیزی کے رحجان کے باعث ہے۔

وزیر خزانہ نے بتایا امریکا میں مقامی تعطیل کے باعث آئی ایم ایف سے گزشتہ شب مذاکرات نہیں ہوسکے، آئی ایم ایف سے مذاکرات ہونے پر جلد اچھی خبر ملے گی، مذاکرات کی کامیابی کے بعد وزیراعظم قوم کو اعتماد میں لیں گے۔ کابینہ ارکان نے تیل کی قیمتوں میں اضافے اور مہنگائی کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم شہباز شریف کی صدارت میں وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں ملکی سیاسی اور معاشی صورتحال پر تفصیلی بحث کی گئی۔

شہباز شریف نے کہا کہ مفتاح صاحب میں آپ کا دفاع نہیں کروں گا ٹیکسوں اور تیل کی قیمتوں میں اضافے پر اپنے ساتھیوں کو مطمئن کریں۔ کابینہ اراکین نے مفتاح اسماعیل سے آئی ایم ایف پروگرام بحال ہونے سے متعلق سخت سوالات کیے۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ تیل کی قیمتوں میں ہوشربا اضافے سے ہم سب جماعتوں کا عوامی گراف گرا ہے۔ وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ آئی ایم ایف سے جلد اچھی خبر ملے گی، امیروں کے لیے ٹیکس بڑھایا ہے، مجھے قیمتیں بڑھانے کا شوق نہیں مگر عالمی منڈی کو دیکھ لیں۔

اجلاس میں ایف اے ٹی ایف کے اہداف حاصل کرنے پر افواج پاکستان اور متعلقہ اداروں کو خراج تحسین پیش کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے سیاسی بنیادوں پر افسران کے تقرر اور تبادلوں کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ ہم قلیل مدت کیلئے آئے ہیں ہمیں سسٹم کو بہتر کرنا چاہیے ۔

وزیر اعظم نے ابینہ کو بتایا کہا کہ جلد گرے سے وائٹ لسٹ میں جائیں گے، قومی سلامتی کے اداروں اور ان کے سربراہان کے خلاف تحریک انصاف کا بے بنیاد پروپیگنڈا قابل مذمت ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More