شہبازشریف اور فضل الرحمان کی ملاقات، سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا ہے کہ 74سال میں پاکستان اپنے مشکل ترین دور سے گزر رہا ہے۔ ایوان میں حکومت کے ظالمانہ اقدامات اور منی بجٹ کا بھرپور مقابلہ کریں گے۔ اپوزیشن کی مشاورت سے تحریک عدم اعتماد لائی جائے گی۔

مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے مولانافضل الرحمان سے ان کی رہائشگاہ پر ملاقات کی جس میں ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے صدر کا کہنا تھا مولانا نے کے پی کے میں پی ٹی آئی کو شکست دی اس پران کومبارکباد دی ہے۔

ان کا کہنا تھاکہ ملک مشکل ترین دور سے گزر رہا ہے۔ معاشی اور سفارتی چیلنجز ہیں۔ حکومت نے 22 کروڑ عوام کو معاشی لحاظ سے بدحال کردیا ہے۔ملاقات میں تحریک عدم اعتماد پر بات ہوئی۔مشاورت کے بعد فیصلہ کیا جائے گا۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ منی بجٹ سے مہنگائی کا ایک نیا طوفان اُٹھ کھڑا ہو گا۔ منی بجٹ پاکستان کی معیشت کو بیرونی اداروں کا غلام بنائے گا۔ ہم اپنی معیشت کوآزاد رکھنا چاہتے ہیں۔ عالمی دباؤ پر قانون سازی کی جارہی ہے۔اب 23 مارچ کا مہنگائی اور اس حکومت کے خلاف مارچ پہلے سے زیادہ اہم ہے۔

پی ڈی ایم سربراہ کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن کے دور میں سی پیک پربہت کام ہوا۔ حکومت نے سی پیک کو جمود کا شکار کیا۔اس حکومت کو سی پیک کے کسی بھی منصوبے کے افتتاح کا حق نہیں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن میں فوج کو طلب کرنے والی بات کومسترد کرتے ہیں۔بلدیاتی الیکشن دوسرا مرحلہ کے دوران ڈپٹی کمشنر، پرائزئیڈنگ افسران کو تبدیل کیا جارہا ہے۔یہ سب کچھ مرضی کے نتائج حاصل کرنے کے لیے کیا جارہا ہے۔الیکشن کسی کا کمیشن غلام نہ بنے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More