تازہ ترین
عدلیہ کو جو دباؤ میں لانے کی کوشش کرے گا، ہم اس کا راستہ روکیں گے، مریم نواز

عدلیہ کو جو دباؤ میں لانے کی کوشش کرے گا، ہم اس کا راستہ روکیں گے، مریم نواز

لاہور: (15 ستمبر 2020) مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف کو گرفتار کر کے پیش کرنے کا حکم اسی مقدمے میں ہے جس میں خود سزا دینے والے جج ارشد ملک نے نواز شریف کی نہ صرف بیگناہی بلکہ بلیک میلنگ اور دباؤ میں زبردستی فیصلہ دلوائے جانے کا اعتراف کیا ہے۔

سابق وزیراعظم نوازشریف کی صاحبزادی مریم نواز نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنے پیغام میں کہا ہے کہ جج ارشد ملک نے ویڈیو میں العزیزیہ ریفرنس میں نواز شریف کی نہ صرف بیگناہی بلکہ بلیک میلنگ اور دباؤ میں زبردستی فیصلہ دلوائے جانے کا اعتراف کیا تھا۔ جج ارشد ملک کو تو گھر بھیج دیا گیا مگر اس سے یہ نہیں پوچھا کہ نواز شریف کو سزا کس کے کہنے پر دی ؟ بلکہ نواز شریف کو ہی دوبارہ گرفتار کرنے کا حکم دے دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ‏مقدمہ تو یہ ہونا چاہیے تھا کہ جج کے اعترافِ جُرم کے بعد سزا کی کیا حیثیت رہ جاتی ہے؟ اگر سزا ہی قائم نہ رہتی ہو تو واپسی کیسی اور گرفتاری کیوں؟ بتاؤ کسی ایک کا نام جس کیلئے ایجنسیز پر مشتمل جے آئی ٹی بنی ہو۔ نیب ریفرنسز دائر کرنے کا حکم جاری اور مانیٹرنگ ججز لگائے گئے ہوں۔

مریم نواز نے کہا کہ ‏معزز چیف جسٹس نے خود فرمایا کہ دباؤ کا شکار ججز عوام کو انصاف نہیں دے سکتے۔ ہمارے نظام انصاف کے بارے میں اس سے بڑی گواہی کیا ہوگی؟ نواز شریف نے پہلے بھی اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر عدلیہ کی آزادی کی جنگ لڑی تھی اور آج بھی جب عدلیہ کو دباؤ کا سامنا ہے تو ہم پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ عدلیہ کو جو بھی دباؤ میں لانے کی کوشش کرے گا، ہم ہر قیمت پر اس کا راستہ روکیں گے۔

Comments are closed.

Scroll To Top