دھاندلی کی پیداوار حکومت کی زیرنگرانی میں بلدیاتی انتخابات قبول نہیں، فضل الرحمان

اسلام آباد: حزب اختلاف کی جماعتوں کے اتحادپاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے بلدیاتی انتخابات کے بائیکاٹ کی دھمکی دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہےکہ بلدیاتی انتخابات ملتوی کردیئے جائیں۔

اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے کے پی کے میں بلدیاتی الیکشن کا شیڈول جاری کردیا ہے۔بلدیاتی الیکشن کے حوالے سے پی ڈی ایم کی جماعتوں سے مشاورت ہوئی ہے۔الیکشن کمیشن کے اقدام پر ردعمل دینا چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا واضح پیغام ہے کہ ہم 2018 کے انتخابات کے نتائج کو تسلیم نہیں کرتے ۔جو حکومت خود دھاندلی کی پیدوار ہو اس کی نگرانی میں بلدیاتی انتخابات کیسے ہوسکتے ہیں ۔تمام پی ڈی ایم جماعتوں کے پاس بظاہر بلدیاتی انتخابات کے بائیکاٹ کا راستہ بچتا نظر نہیں آرہا۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ڈی جی آئی ایس آئی کی نوٹیفکیشن میں تاخیر اور اب اجرا سب فیس سیونگ ہے ۔اگر ایک سویلین شخص کو ڈی جی آئی ایس آئی کو لگایا جاتا تو پھر ایگزیکٹو آرڈر کے تحت ہوتا ۔مگر جب ایک جنرل کو آرمی چیف نے تقرر کیا تو یہ جنرل باجوہ کا حق تھا۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ مہنگائی کے خلاف پی ڈی ایم عوام کی شراکت کے ساتھ سڑکوں پر ہے۔جو حکومت لوگوں کو امن نہ دے سکے اور معیشت بھی تباہ کردے تو اسے حکومت کا کوئی حق نہیں۔احتجاج ٹی ایل پی کا جمہوری حق ہے۔

امیر جے یو آئی ف نے مزید کہا کہ حکومت نے ٹی ایل پی پر انتہائی ظالمانہ تشدد کیا۔خود پی ٹی آئی والے 126 دن تک احتجاج کرتے رہے اور ان کو اجازت نہیں ۔جب ٹی ایل پی کا مظاہرہ نوازشریف کے خلاف تھا اس وقت سب ٹھیک تھا۔اگر وہ جائز نا جائز اتنا دیکھتے ہیں تو عمران خان جو خود ہٹ جانا چاہیئے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More