خرم دستگیر نے ملک میں لوڈشیڈنگ کی وجوہات بتا دیں

اسلام آباد: وفاقی وزیر توانائی خرم دستگیر کہتے ہیں بجلی کی پیداواری صلاحیت کے بجائے ایندھن کا بحران ہے ۔ حکومت سے پچیس مئی تک کی ضروریات کیلئے ایک سو آٹھ ارب روپے مانگ لیئے۔ یکم مئی سے لوڈشیڈنگ کے معاملات بتدریج حل ہونے کی یقین دہانی بھی کرادی۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیر برائے توانائی خرم دستگیر کا کہنا تھا کہ بجلی کا حالیہ بحران بجلی کی پیداواری صلاحیت کا نہیں بلکہ ایندھن کا بحران ہے۔ایندھن کی عدم دستیابی کے باعث پانچ ہزار سات سو انتالیس میگاواٹ کی صلاحیت بند پڑی ہے جبکہ دوہزار ایک سو چھپن میگاواٹ بجلی کی کمی فنی خرابی کے باعث ہے۔ خرم دستگیر کے مطابق پورے ملک میں اس وقت بجلی کے بحران کے باعث لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے، یکم مئی سے حکومت کی طرف سے گیس کی متوقع فراہمی سے لوڈشیڈنگ کے معاملات بتدریج حل ہوجائیں گے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More