تازہ ترین
شہر قائد کے برساتی نالوں کی صفائی کا کام تیز کردیا گیا

شہر قائد کے برساتی نالوں کی صفائی کا کام تیز کردیا گیا

کراچی: (5 جولائی 2020) شہر قائد کے برساتی نالوں کی صفائی کا کام تیز کردیا گیا۔ رواں سال مون سون کی بارشوں سے قبل ورلڈ بینک کے تعاون سے سندھ حکومت نے نالہ صفائی کا کام شروع کردیا۔ گذشتہ چار سالوں میں اڑتیس بڑے نالوں پر 93.7 کروڑ روپے صفائی پر خرچ ہوئے کے باوجود نالوں کی صفائی ممکن نہیں ہوسکی۔

کراچی میں نالوں کی صفائی کیسے ممکن ہوگی یہ سوال عوام کے لیے پریشان کن ہے۔کئی سالوں سے بلدیہ عظمیٰ کراچی کے بااثر افسر نے کروڑوں روپے نالہ صفائی کے نام پر خرچ کیے لیکن شہریوں کو کوئی فائدہ نہ ہوسکا۔ نہ تو نالوں کی صفائی ہوسکی اور نہ ہی نالوں کے اوور فلو ہونے سے بچنے کا کوئی موثر نظام بن سکا ہے۔ تیز بارشوں کی صورت میں شہریوں کو ایک بار پھر سے مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

شہر قائد میں اڑتیس بڑے اور پانچ سو سے زائد چھوٹے نالے ہیں۔ ان نالوں کا اصل کام برساتی پانی کو شہر کی دو ملیر اور لیاری ندی میں ڈال کر بحیرہ عرب میں ڈالنا ہے لیکن ان نالوں کے اطراف ایک تو قانونی اور غیر قانونی آبادیاں قائم ہوگئی ہیں۔ دوسرا شہر کا کچرا ان برساتی نالوں میں پھینکا جاتا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ سیوریج کی لائنیں ان نالوں میں ملادی گئی ہیں۔

رواں سال بھی نالوں کی صفائی کا عمل بارشوں کی پیشن گوئی سے محض چند روز قبل شروع کیا گیا ہے۔ بلدیہ عظمیٰ کراچی کی ناقص کارکردگی کی بنیاد پر اس بار نالہ صفائی کا کام ورلڈ بینک کے تعاون سے شروع ہوا ہے لیکن ذمہ داری سندھ حکومت کے پاس ہے۔ گزشتہ چار سالوں میں ان نالوں کی صفائی پر 93.7 کروڑ روپے کی خطیر رقم خرچ کی گئی جبکہ اس سال ورلڈ بینک سے اٹھ ملین ڈالر یعنی ایک ارب پندرہ کروڑ سے زائد ملے ہیں۔

پروجیکٹ ڈائریکٹر نالہ صفائی زبیر چنا کے مطابق نالوں کی صفائی کا عمل پورا سال، پندرہ اگست کے بعد بھی جاری رہے گا جبکہ ایک اندازے کے مطابق پانچ کروڑ کیوبک فٹ تک کچرا نکالنا ہے جس کو جام چاکرو لینڈ فل سائٹ اور ٹی پی ون سائٹ ایریا میں ٹھکانے لگانے کا بندوبست کیا گیا ہے۔

Comments are closed.

Scroll To Top