روس کو یوکرین پر حملےکی بھاری قیمت چکانا پڑے گی، جو بائیڈن

واشنگٹن :امریکی صدر جو بائیڈن کا کہنا ہے کہ روس کو یوکرین پر حملہ کرنے پر طویل عرصے تک بھاری قیمت چکانا پڑے گی،چاہے ان کی فوجی مہم مختصر مدت میں کامیاب ہوجائے۔

بائیڈن نے اپنے اسٹیٹ آف دی یونین خطاب میں کہا کہ پیوٹن میدان جنگ میں عارضی فائدہ اٹھاسکتے ہیں لیکن انہیں طویل عرصے تک اس کی بڑی قیمت ادا کرنی ہوگی۔بائیڈن نے روسی پروازوں پر امریکی فضائی حدود استعمال کرنے پر پابندی عائد کرنے کا اعلان کیا۔انہوں نے کہا کہ روس کی فوجی دراندازی روکنے کے لیے ہم ٹیکنالوجی تک روس کی رسائی کو روک رہے ہیں جو اس کی اقتصادی طاقت کو ختم کر دے گی اور آنے والے سالوں تک اس کی فوج کو کمزور کر دے گی۔

بائڈن نے کہا کہ تاریخ دیکھے گی کہ یوکرین کے خلاف پیوٹن کی جنگ نے روس کو کمزور اور باقی دنیا کو مضبوط کر دیا ہو گا۔انہوں نے کانگریس کو بتایا کہ کیف کے باہر روسی بکتر بند گاڑیوں کی ایک میل طویل قطارپہنچی جس کا مقصد یوکرائنی دارالحکومت پر قبضہ کرنا تھا۔اس اقدام کے بعد امریکہ اور اتحادیوں نے روس پر پابندیاں سخت کیں۔یوکرین کے حملے پر روسی صدر ولادیمیر پیوٹن نے مغرب کے ردعمل کو سمجھنے میں غلطی کی، وہ مغربی اقوام کے سخت ردعمل کا درست اندازہ نہیں لگا سکے۔پیوٹن نے سفارت کاری کی کوششوں کو مسترد کیا، ان کا خیال تھا کہ مغرب اور نیٹو جواب نہیں دیں گے، روس نے سوچا تھا کہ وہ ہمیں اپنے ہی گھر میں تقسیم کر سکتا ہے، لیکن وہ غلط تھا اور ہم تیار تھے۔امریکا اپنے اتحادیوں کے ساتھ مل کر نیٹو کے ایک ایک انچ کا دفاع کرے گا۔بائیڈن نے یوکرین میں براہ راست امریکی فوجی شرکت کو مسترد کردیا ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More