اسلام آباد ہائی کورٹ نےپیکا ترمیمی آرڈیننس غیر آئینی قرار دیدیا

اسلام آباد ہائیکورٹ کا بڑا فیصلہ ،عدالت نے پیکا ترمیمی آرڈیننس کو غیر آئینی قرار دیدیا ہے۔عدالت نے پیکا آرڈیننس2022 کو کالعدم قرار دے دیا،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے محفوظ شدہ فیصلہ جاری کیا۔

چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے ریمارکس دیئے تھے کہ عدالت کے سامنے ایس او پیز رکھے اور ان کو ہی پامال بھی کیا گیا۔چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے 4 صفحات پر مشتمل فیصلہ جاری کیا جس میں کہا گیا کہ پیکا آرڈیننس کے تحت ہونے والی تمام کارروائیاں کالعدم قرار دی جاتی ہیں۔

عدالت نے فیصلے میں ریمارکس دیئے کہ کوئی شک نہیں کہ پیکا ترمیمی آرڈیننس غیر قانونی ہے اور اسے ختم کیا جاتا ہے،آرٹیکل 19 شہریوں کو حق آزادی اظہار رائے دیتا ہے۔اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا کہ پیکا ترمیمی آرڈیننس آرٹیکل 9،14 ،19 اور 19 اے کی خلاف ورزی ہے،پیکاترمیمی آرڈیننس کا جاری کرنا غیرقانونی قرار دیا جاتا ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More