اداروں کی ذمہ داری ہےکہ ملک کو تباہی سے بچائیں، عمران خان

پشاور: چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے کہا ہے کہ اداروں کو کہنا چاہتا ہوں ملک تباہی کی طرف جا رہا ہے اور ملک کو تباہی سے بچانا صرف ہماری ذمہ داری نہیں ہے، اداروں کی بھی ذمہ داری ہے کہ ملک کو تباہی سے بچائیں۔

پشاور میں تحریک انصاف کی کور کمیٹی اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا تھا ہم نے کبھی پرتشدد احتجاج نہیں کیا۔ ہمارا 26 سالہ ریکارڈ ہے کبھی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی، بیرونی سازش تحریک عدم اعتماد کو کامیاب کرنے کیلئے ہوئی، عمران خان کا کہنا تھا منتخب وزیراعظم کو اس لیے ہٹایا گیا کیونکہ وہ آزاد خارجہ پالیسی چاہتا تھا،

عمران خان کا کہنا تھا ڈیڑھ ماہ میں ہی انہوں نے ڈیزل اور پیٹرول کی قیمتوں میں 30 روپے کا اضافہ کیا، ہندوستان امریکا کا اسٹرٹیجک پارٹنر ہے پھر بھی وہاں تیل کی قیمتیں کم ہوئیں، عمران خان کا مذید کہنا تھا ہندوستان نے روس سے سستا تیل خرید کر قیمتیں کم کیں، پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں آئی ایم ایف کے دباؤ میں آکر بڑھائی گئیں،

انہوں نے نے کہا کہ ملک کے کرپٹ ترین لوگ حکومت میں ہیں اور جن کو سزا ہونی تھی وہ وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ بن گئے۔ ہم امپورٹڈ حکومت کو کبھی نہیں مانیں گے اور ہمارا احتجاج بھی اسی وجہ سے تھا۔ ہم سپریم کورٹ سے ضمانت چاہتے ہیں یہ جتنی دیر رہیں گے ملک مزید بحران کا شکار ہو گا۔

عمران خان نے کہا کہ پر امن احتجاج ہمارا حق تھا لیکن ہمارے آزادی مارچ میں کارکنوں کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ موجودہ حکومت میں 60 فیصد لوگ ضمانت پر ہیں۔ ہم نے کبھی پرتشدد احتجاج نہیں کیا اور اب ہم اس معاملے کو ہر فورم پر اٹھائیں گے۔ پیر کو ہم اس معاملے پر سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کرنے جا رہے ہیں اور عدالت سے پوچھیں گے کیا احتجاج کسی جمہوری جماعت کا حق ہے کہ نہیں۔

انہوں نے کہا کہ کور کمیٹی کے اجلاس میں آئندہ کے لائحہ عمل کا جائزہ لیا ہے اور ہم نے اپنی تیاریاں شروع کر دی ہیں کیونکہ انہیں 6 دن کا وقت دیا تھا لیکن انہوں نے ہمارے خلاف گلو بٹ استعمال کیے۔ اس بار پوری تیاری کے ساتھ آئیں گے۔ آج سے سب کو مارچ کی تیاری کرنے کو کہہ دیا ہے اور جو ہمارے ساتھ ہوا اس سے آئندہ کیسے بچنا ہے پلان بنا لیا ہے۔

عمران خان نے کہا کہ اداروں کو کہنا چاہتا ہوں ملک تباہی کی طرف جا رہا ہے اور ملک کو تباہی سے بچانا صرف ہماری ذمہ داری نہیں ہے، اداروں کی بھی ذمہ داری ہے کہ ملک کو تباہی سے بچائیں۔ ڈیڑھ ماہ میں ہی انہوں نے ڈیزل اور پیٹرول کی قیمتوں میں 30 روپے کا اضافہ کر دیا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ماڈل ٹاؤن میں نہتے لوگوں پر گولیاں چلائی گئیں، رانا ثنا اللہ اور شہباز شریف کو سزائیں ہو جاتیں تو پولیس آج یہ کچھ نہ کرتی۔ یہ فاشسٹ ہیں اور جیسے ہی حکومت میں آتے ہیں ایسی حرکتیں کرتے ہیں۔ میں اُس روز صرف لوگوں کے غصہ کی وجہ سے رکا۔ جو ہمارے ساتھ ہوا ہم اس کے لیے تیار ہی نہیں تھے۔

انہوں نے کہا کہ یہ نیب میں بھی یہ اپنا آدمی رکھوانے لگے ہیں اور چیف الیکشن کمشنر پہلے ہی ان کا نوکر تھا۔ انہوں نے ایف آئی اے کو تباہ کر کے رکھ دیا۔ معتبر اداروں سے پوچھتا ہوں کہ کیا آپ ملک کے مستقبل کا سوچ رہے ہیں ؟ میں اس صورتحال کو تسلیم نہیں کرتا۔ عدالت میں اوورسیز پاکستانیوں کی ووٹنگ کے خاتمے کو چیلنج کریں گے اور نیب قوانین میں ترمیم کا معاملہ بھی عدالت میں چیلنج کریں گے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More