قومی اسمبلی میں عمران خان کا امریکا مخالف بیانیہ جعلی قرار

اسلام آباد: قومی اسمبلی اجلاس میں عمران خان کے امریکا مخالف بیانیہ کو حکومتی ارکان نے جعلی قرار دیدیا۔نون لیگی و پی ٹی آئی ارکان نے زرعی شعبے کی طرف توجہ دلاتے ہوئے کہاکہ سنجیدگی سے غور نہ ہوا تو کسان مر جائیگا۔ مستعفی ارکان کا بزنس بھی ایجنڈے کا حصہ رہا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر راجا پرویز اشرف کی زیر صدارت ہوا۔ آج منگل کے روز نجی کارروائی کے طور پر سیشن چلایا۔ اپوزیشن پی ٹی آئی کے مستعفی ارکان کا نجی بزنس بھی ایجنڈے میں شامل کرکے استعفوں کے پراسیس کو نامکمل ہونے کا تاثر دیدیا گیا ۔

اسپیکر قومی اسمبلی نے نو منتخب کابینہ کو مبارک دیتے ہوئے امید کا اظہار کیا کہ تجربے اور دانش کو استعمال میں لاکر ملک کیلئے سود مند اقدام اٹھائے جائینگے۔ مولانا عبدالاکبر چترالی نے عافیہ صدیقی کی امریکی قید سے رہائی کا مطالبہ کیا جبکہ ن لیگی رکن راؤ اجمل اور پی ٹی آئی منحرف رکن افضل ڈھانڈھلہ نے زراعت کی جانب خصوصی توجہ دیتے ہوئے کہاکہ گزشتہ دور حکومت میں کوئی اقدام نہیں اٹھائے گئے۔

انہوں نے کہا کہ سنجیدہ اقدام نہ اٹھایا گیا تو کسان بھوکوں مر جائیگا۔ گن پوائنٹ پر کاشتکاروں سے گندم نہ خریدی جائے۔پیپلز پارٹی کی شگفتہ جمانی نے کہاکہ میں نے صرف مؤذن پر اعتراض کیا تھا مگر سوشل میڈیا پر طوفان بدتمیزی اٹھادیا گیا۔ میں خود ساڑھے تین سال تک وزیر مذہبی امور رہی ہوں۔اذان سے سکون ملتا ہے البتہ مؤذن کی خوش الہانی کا مسئلہ اٹھایا تھا۔

ن لیگی رکن علی گوہر نے کہاکہ عمران ایک سازش کے تحت مسلط جبکہ اب ایک جعلی بیانیہ لے کر عوام میں گئے ہیں۔اسد قیصر اور قاسم سوری نے آئین و قانون کی دھجیاں بکھیریں جبکہ شیخ روحیل اصغر بولے جس کو خاتم النبیین کہنا نہ آئے وہ رہنما بن جائے تو اس سے بڑا عذاب کوئی نہیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More