بائیس مارچ سے پہلے اجلاس نہ بلایا تو آئین شکنی ہوگی، مریم اورنگزیب

اسلام آباد: مسلم لیگ نون کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ بائیس مارچ سے پہلے قومی اسمبلی اجلاس نہ بلانا اسپیکر کی جانب سے آئین شکنی ہوگی جو ملک سے غداری اور بغاوت کے زمرے میں آتی ہے۔

مسلم لیگ نون کی ترجمان مریم مریم اورنگزیب نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 54کی شق 3کے تحت ایک چوتھائی ارکان ریکوزیشن درخواست جمع کرائیں تو اسپیکر اجلاس بلانے کا پابند ہے۔ چودہ روز سے زیادہ تاخیر نہیں کی جاسکتی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے بائیس مارچ سے پہلے اجلاس نہ بلایا تو آئین شکنی ہوگی جس کی سزا آرٹیکل چھ میں مقرر ہے ۔ آئین اسپیکر کو پابند کرتا ہے کہ تحریک جمع ہونے کے بعد سات دن کے اندر اس کارروائی کو مکمل کرے ۔

مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ تحریک جمع ہونے کے بعد اسپیکر تین دن کے بعد اور سات دن سے پہلے رائے شماری کرانے کا پابند ہے ۔ آئینی و قانونی شقوں سے روگردانی آئین شکنی ہے جو ملک سے غداری اور بغاوت کے زمرے میں آتی ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More