بھارت کی سلامتی کونسل میں مستقل رکنیت پر کوئی بات نہیں ہوئی،دفتر خارجہ

اسلام آباد : ترجمان دفتر خارجہ نے بھارت کی سلامتی کونسل میں مستقل رکنیت کے حوالے سے پاکستانی حمایت کی افواہوں کو یکسر مسترد کردیا۔ ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری سے ایک مکمل بے بنیاد اور خیالی بات منسوب کی جارہی ہے۔ وزیرخارجہ اور امریکی سیکریٹری اسٹیٹ کے درمیان نیویارک میں بھارت کی سلامتی کونسل میں مستقل رکنیت کے موضوع پر کوئی بات نہیں ہوئی۔

اسلام آباد میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران ترجمان دفتر خارجہ عاصم افتخار نے بھارت کی سلامتی کونسل میں مستقل نمائندگی پر پاکستان کی حمایت کی رپورٹس کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان کا سلامتی کونسل کے مستقل اراکین کی تعداد میں اضافے کی بھرپور مخالفت کی پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ پاکستان ایسی سلامتی کونسل کا خواہاں ہے جو چند کے بجائے اکثریتی ریاستوں کے مفادات کا تحفظ کرے۔ سلامتی کونسل کی غیرمستقل کیٹگری میں متواتر انتخابات وہ بہترین طریقہ ہے کہ جو جمہوری اصولوں کے تحت ادارے کے نمائندہ کردار کو مزید مؤثر بنا سکتا ہے۔

حکمراں بھارتیہ جنتا پارٹی کے دو ارکان کی جانب سے حضور پاک ﷺ کی شان میں گستاخانہ بیانات کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ ان توہین آمیز بیانات سے پاکستان سمیت دنیا بھر کے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی۔ امریکہ کی جانب سے دنیا میں مذہبی آزادی پر مبنی رپورٹ میں دہرے میعار ہیں ۔ترجمان نے کہا کہ بھارت اخلاقی جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے ان ارکان کو کٹہرے میں لائے۔

ترجمان دفتر خارجہ عاصم افتخار نے کہا کہ حنا ربانی کھر کی زیر صدارت نیشنل کمیٹی برائے ایف اے ٹی ایف کام کر رہی ہے۔ بھارت کے مختلف حصوں میں ایٹمی مواد پکڑا جانا غیر معمولی اور ایٹمی پروگرام پر سوالات کو جنم دیتا ہے۔ ترجمان نے کہا کہ روس سے سستے تیل کی خریداری کیلئے ماسکو میں پاکستانی سفارتخانہ اور یہاں روسی حکام سے رابطہ میں ہیں ہم ہر وہ کام کریں گے جو پاکستان کے مفاد میں ہو گا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More