ملک کے مختلف علاقوں میں بارش اور سیلابی ریلوں نے تباہی مچادی

ملک کے مختلف علاقوں میں بارش اور سیلابی ریلوں نے تباہی مچادی۔ چھتیں اور دیواریں گرنے سے دس افراد جاں بحق ہوگئے۔ نشیبی علاقوں میں پانی گھروں، دکانوں اور سرکاری عمارتوں میں بھی داخل ہوگیا۔

خیرپور کےگاؤں علی خان کٹوہر میں مکان کی چھت گرنے سے دو بچوں سمیت پانچ افراد جاں بحق ہوگئے۔ علاقہ مکینیوں نے اپنی مدد آپ کے تحت ملبے سے لاشوں اور زخمیوں کو نکالا۔ ادھر قمبر شہدادکوٹ میں مسلسل بارشوں کے باعث حمل جھیل کا پانی قریبی دیہات میں بھی داخل ہوگیا ہے۔

جعفرآباد میں بھی بارش کے باعث گھر کی چھت گرگئی۔ پولیس کے مطابق بچوں سمیت سات افراد ملبے تلے دب گئے۔ ملبے سے پانچ افراد کی لاشیں نکالی گئی ہیں۔ ادھر سنجاوی میں بارش اور سیلابی ریلوں کی وجہ سے سنجاوی سے ہرنائی شاہراہ تین روز سے ٹریفک کیلئے بند ہے۔ بائیس میل اور زندہ پیر کے علاقے بھی لینڈ سلائڈنگ کی وجہ سے ہیوی ٹریفک کے لیے بند ہیں۔

راجن پور میں سیلابی ریلہ سے گورنمنٹ ہائر سیکنڈری اسکول کی دیوار گرگئی۔ پانی سے فاضل پور کا علاقہ بھی ڈوب گیا۔ سانگھڑ اور نوکوٹ میں نہروں میں شگاف پڑنے سے وسیع علاقہ زیر آب ہے۔ علاقہ مکینوں کو شدیدمشکلات کا سامنا ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More