تازہ ترین
ائیربلیو طیارہ حادثے کو آج 10سال مکمل ہوگئے

ائیربلیو طیارہ حادثے کو آج 10سال مکمل ہوگئے

اسلام آباد:(28 جولائی 2020) ائیربلیو حادثے کو آج 10سال مکمل ہوگئے۔ یہ حادثہ پاکستان کی فضائی تاریخ کا بد ترین واقعہ ہے۔ ایئر بلیو کی پرواز 202 اندرون ملک مسافر بردار پرواز تھی جو 28 جولائی 2010 کو پاکستانی دار الحکومت اسلام آباد کے نواح میں حادثہ کا شکار ہوئی۔ جہاز پر سوار ایک سو چھیالیس (146) مسافر اور عملہ کے چھ (6) افراد لقمہ اجل بن گئے۔ وفاقی وزیر ہوا بازی نے ائیر بلیو طیارہ حادثے کی برسی پر اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ آزادانہ انکوائری سے لواحقین اور پوری قوم کو اصل حقائق کا پتہ چلے گا۔

ایئر بلیو کا یہ جہاز ایئر بس اے تین سو ایکس- دوسواکتیس پرواز نمبر 202 قائد اعظم ایئرپورٹ کراچی سے شہید بینظیر بھٹو ایئرپورٹ اسلام آباد کے لیئے روانہ ہوا تھا کہ لینڈنگ سے قبل اسلام آباد کے شمال میں واقع مارگلا پہاڑیوں میں گر کے تباہ ہو گیا۔ جہاز میں موجود تمام 152 افراد لقمہ اجل بن گئے تھے۔ بد قسمت مسافروں میں 142 پاکستانی، دو امریکی، ایک صومالیہ اور ایک آسٹریا کا شہری شامل تھا۔

ایئر بلیو پرواز حادثے کی دسویں برسی کے موقع پر اسلام آباد کے ایچ الیون قبرستان میں تقریب کا انعقاد کیا گیا،جہاں وزیر ہوابازی غلام سرور نے حادثے میں جاں بحق افراد کی قبروں پر حاضری دی۔

اس موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا کہ ہم لواحقین کے دکھ میں برابر کے شریک ہیں، آج بھی اٹھائیس جولائی دو ہزار دس کا حادثے والادن یاد ہے، جب میں نے اس طیارے کو انتہائی نیچے پرواز کرتے ہوئے خود دیکھا جو بعد میں مارگلہ کی پہاڑیوں سے جا ٹکرایا تھا۔وفاقی وزیر ہوا بازی غلام سرور خان کا کہنا تھا کہ دوہزار دس سے دوہزار بیس تک فضائی حادثات میں کئی زند گیوں کے چراغ گل ہوئے، کراچی طیارہ حادثے کے حوالے سے وفاقی وزیر نے کہا کہ وزیر اعظم کی ہدایت پر اس حادثے کی انکوائری کو مکمل کرکے پبلک کیا گیا، دعا ہے کی کراچی جیسا سانحہ دوبارہ نہ ہو۔

Comments are closed.

Scroll To Top