پاکستان نے تمام شرائط پوری کردیں،ایف اے ٹی ایف

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) نے پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالنے پر رضا مندی ظاہر کردی۔پاکستان نےایف اےٹی ایف کی تمام شرائط مکمل کرلیں۔فیٹیف کےمطابق پاکستان نے تمام شرائط پوری کردیں، پاکستان نے 34 آئٹمز پر مبنی اپنے دو ایکشن پلان مکمل کر لیے۔

صدر ایف اے ٹی ایف مطابق 2سال میں 5بار انسداد دہشتگردی کا جائزہ لیا،پاکستان نے ایف اے ٹی ایف کےنکات پر عمل کرکے ذمہ داری کا مظاہرہ کیا،ایف اے ٹی ایف کا مزید کہنا ہے کہ پاکستان کا دورہ کرکے شرائط کی تکمیل کی تصدیق کی جائے گی۔

ایف اے ٹی ایف کا کہنا ہے کہ کورونا صورت حال کا جائزہ لیتے ہوئے جلد از جلد پاکستان کا دورہ کیا جائے گا، پاکستان نے منی لانڈرنگ، دہشت گردی کی فنانسنگ روکنے کے لیے اصلاحات مکمل کیں۔

برلن میں ایف اے ٹی ایف کے اجلاس میں پاکستان کی کارکردگی کی رپورٹ کا جائزہ لیا گیا، جہاں پاکستانی وفد کی قیادت وزیرِ مملکت برائے خارجہ حنا ربانی کھر نے کی۔پاکستان نے اس بار سفارتی سطح پر ممبر ممالک کے سامنے غیر رسمی طور پر اپنی پوزیشن واضح کی، ایف اے ٹی ایف کی جانب سے پاکستان کو 2 مرحلوں میں 34 نکات پر عمل درآمد کا کہا گیا تھا۔

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی طرف سے چار سال قبل پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل کیا گیا ۔ گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے پاکستان نے کامیابی کے ساتھ 27 سخت شرائط پر عملدرآمد کیا ۔ اب پاکستان میں منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی معاونت کیخلاف قوانین عالمی معیار کے مطابق ہیں ۔

پاکستان کو چار سال قبل جون دوہزاراٹھارہ میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی گرے لسٹ میں شامل کیا گیا تھا، ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو اپنے مالیاتی نظام کو بہتر بنانے کیلئے 27 شرائط پر عملدرآمد کاکہاتھا۔

پاکستان کو بنیادی طور پر منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی معاونت روکنے اور ملوث افراد کیخلاف قوانین کو سخت بنانا اور مقدمات اور سزا کا جلد فیصلوں کا نظام بنانا تھا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More