فیصل واوڈا کی نااہلی کا 27 صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری

اسلام آباد: الیکشن کمیشن نے تحریک انصاف کے سینیٹر فیصل واڈا نااہلی کیس کا تحریری فیصلہ جاری کردیا ۔ 27 صفحات پر مشتمل فیصل چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجا نے تحریر کیا۔ فیصلے میں آئین کے آرٹیکل 63 ون سی کا حوالہ دیا گیا ہے ۔

چیف الیکشن کمشنر نے پی ٹی آئی کے رہنما فیصل واوڈا کی نا اہلی سے متعلق 27 صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کردیا۔ فیصلے میں آئین کے آرٹیکل 63 ون سی کا حوالہ دیا گیا ہے۔ فیصلے میں آئین کے آرٹیکل 62 ون ایف کا بھی حوالہ63 ون سی اور 62 ون ایف کے تحت اہل نہیں تھے۔

تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ فیصل واڈا نے جعلی بیان جمع کرائے۔ فیصل واڈا نے اس وقت قومی اسمبلی سے استعفیٰ دیا جب کیس ہائی کورٹ میں چل رہا تھا۔فیصل واڈا کا یہ عمل انہیں مشکوک بناتا ہے۔ فیصل واڈا نے اپنا جرم چھپانے کے لیے قومی اسمبلی سے استعفیٰ دیا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ فیصل واڈا نے ایم این اے ہوتے ہوئے سینٹ الیکشن میں ووٹ کاسٹ کیا پھر خود کو سینٹ سیٹ کے لیے پیش کردیا۔ اس عمل نے فیصل واڈا کو مزید مشکوک بنا دیا۔ اس لیے فیصل واوڈا کا سینیٹر کا نوٹیفکیشن کالعدم قرار دیا جاتا ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More