جاسوسی اور ہیکنگ میں ملوث فیس بک اور انسٹاگرام اکاؤنٹس بند

کیلی فورنیا: فیس بک کی پیرنٹ کمپنی میٹا نے غیرقانونی سائبر سرگرمیوں کے ذریعے پیسہ کمانے والے گروپس پر پابندی عائد کر دی ہے اور 50 ہزار سے زائد افراد کو سیاسی و سماجی کارکنوں، صحافیوں کی جاسوسی میں ملوث کمپنیوں سے خبردار کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق میٹا نے ہیکنگ میں ملوث گروپس سے منسلک ایک ہزار 500 فیسبک اور انسٹاگرام پیجز کو ہٹا دیا ہے۔فیسبک نے 50 ہزار سے زائد افراد کو انتباہ جاری کیا ہے جن کے بارے میں اس کا خیال ہے کہ 100 سے زائد ممالک میں جاسوسی کی کمپنیوں نے انہیں نشانہ بنایا ہے جن میں سے کئی کا تعلق اسرائیل، بھارت ، مقدونیہ سے ہے۔

فیسبک کی پیرنٹ کمپنی میٹا کا کہنا ہے کہ اس نے کوب ویبز ٹیکنالوجیز، کوگنیٹ، بلیک کیوب اور بلیو ہاک سے منسلک اکاؤنٹس ڈیلیٹ کر دیے ہیں۔ یہ تمام (کمپنیاں) اسرائیل میں بنائی گئی تھیں۔انڈیا میں قائم کمپنی بیل ٹروایکس، جنوبی مشرقی یورپ میں واقع نارتھ میکڈونیا کی کمپنی سائیٹروکس اور چین کی ایک نامعلوم فرم سے منسلک کچھ اکاؤنٹس بھی میٹا پلیٹ فارمز سے ہٹا دیے گئے ہیں۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More