ڈپٹی اسپیکر نے پارلیمانی روایات کی دھجیاں اڑائیں، شہبازشریف

اسلام آباد: مسلم لیگ ن کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن رہنما میاں محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ ڈپٹی اسپیکر نے آج پھر ایوان میں پارلیمانی روایات کی دھجیاں اڑائیں۔وزیراعظم عمران خان کیخلاف عدم اعتماد کی تحریک آگے لیکر جائیں گے۔ آئین اور قانون کا راستہ اختیار کیا جائیگا پارلیمان کے اندر حق لیا جائیگا۔

پارلیمنٹ کے اجلاس کے بعد پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری سمیت اپوزیشن رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا کہ ڈپٹی اسپیکر نے آج پھر ایوان میں پارلیمانی روایات کی دھجیاں اڑائیں۔ آج ایوان میں تحریک عدم اعتماد پر بحث ہونا تھی جبکہ اپوزیشن نے آج ووٹنگ کے لیے اسپیکر کو درخواست بھی دی تھی۔ سوالات کرنے والے تمام ارکان نے ووٹنگ کامطالبہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ ڈپٹی ا سپیکر نے جب دیکھا کہ کوئی ممبر سوال کرنے پر تیار نہیں تو وہ بھاگ گئے۔ میں اور بلاول اسپیکر ڈائس پر بھی گئے مگر آج بھی قانون کی پاسداری نہیں کی گئی۔ہم نے فیصلہ کیا تھا آج کوئی غیر پارلیمانی بات نہیں کریں گے۔عدلیہ بھی دیکھ رہی ہے۔ پورا ملک پریشان ہے۔ متحدہ اپوزیشن کے آج 172ارکان ایوان میں موجود تھے۔

شہباز شریف نے کہا کہ عدم اعتماد کی تحریک آگے لیکر جائیں گے۔ عدم اعتماد کو کامیاب کرنے کیلئے جو نمبر درکار ہے وہ آج ہمارے پاس تھے۔ سلیکٹڈ وزیراعظم کے پاس اس کے بعد کیا جواز رہ جاتا ہے۔ سابق وزیراعظم نوازشریف پرجھوٹے الزامات لگائے جارہے ہیں۔عمران نیازی اس گھٹیا لیول پرنہیں جانا چاہتے جہاں تم جا چکے ہو۔ تمہیں فارن فنڈنگ کرنے والے بھارتی،اسرائیلی بھی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ الزام لگانا بہت آسان اور ثابت کرنا بہت مشکل ہے۔آپ نے فنڈز لیے اور اسٹیٹ بینک سمیت باقی اداروں سے بھی چھپایا۔ پوری قوم کے سامنے آج متحدہ اپوزیشن کامیاب ہوچکی ہے۔ بدبانی تمہارا تکیہ کلام ہے۔ایک خاتوننے اربوں کی کرپشن کرکے پیسے دبئی بھجوائے۔ عمران نیازی کو اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیے۔ باتیں امر بالمعروف اور ریاست مدینہ کی کرتے ہو، گیس، چینی،گندم میں اربوں روپے کے گھپلے کیے گئے۔

جمعیت علمائے اسلام (ف) کے رکن قومی اسمبلی مولانا اسعد محمود نے کہا کہ مختلف ذرائع سے اسلام آباد میں ایک لاکھ لوگوں کوجمع کرانے کی خبریں چلائی جارہی ہے۔ ہم کسی بدمزگی کی طرف نہیں جانا چاہتے۔ اگر آپ یہی راستہ اپنائیں گے تو یہی راستہ ہم بھی اپنائیں گے۔ دوٹوک اعلان کرتے ہیں اپنے ممبران کو تحفظ کریں گے۔ شہبازشریف کو وزیراعظم کی کُرسی پربٹھائیں گے۔ان کواپنے ہٹنے کی نہیں شہبازشریف کے کرسی پربیٹھنے کی تکلیف ہوگی۔ ہم اسے یہ تکلیف پہنچائیں گے۔

بی این پی مینگل کے سربراہ سردار اختر مینگل نے کہا کہ آج اسمبلی کا ماحول سب نے دیکھا۔متحدہ اپوزیشن نے اپنی اکثریت ثابت کردی۔ کپتان روزاول سے بھاگا ہوا ہے۔ ایوان کوایک مزاحیہ تھیٹربنادیا گیا ہے۔ آپ کوموقع دیا گیا ہے اکثریت ثابت کریں، سیاست تو دور کی بات اگر اخلاقیات ہوتی تو پہلے دن استعفی دے دیتے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More