ٹرانسپورٹرز کی دھرنوں کیلئے کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ پر حکومت پر تنقید

اسلام آباد: پاکستان گڈز ٹرانسپورٹرز اینڈ کنٹینرز الائنس نے مارچ اور دھرنوں کیلئے کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ پر حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے چوبیس گھنٹے کی ڈیڈ لائن دیدی۔ ٹرانسپورٹر نے کہا کہ وزیر داخلہ سمیت ہر سطح پر رابطوں کے باوجود شنوائی نہیں ہوئی ہائیکورٹ میں پٹیشن دائر کرنے پر مجبور ہونگے ۔

گڈز ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن کے مختلف شہروں سے تعلق رکھنے والے رہنماؤں نے مشترکہ پریس کانفرنس کی ۔ اس موقع پر ٹرانسپورٹر رہنما ؤں نے کہا کہ مال سے لدے کنٹینرز پکڑنے کیخلاف حکومت کو چوبیس گھنٹے کی ڈیڈ لائن دیتے ہیں۔ کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ بند اور پہلے سے پکڑے گئے نہ چھوڑے گئے تو ہائیکورٹ میں پٹیشن دائر کرکے عدلیہ سے انصاف لیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے لیے 25 مئی کا مارچ ختم ہونے کے باوجود اب بھی جاری ہے۔ کروڑوں روپے کا نقصان ہوچکا ہے۔ہمیں مجبور نہ کیا جائے کہ ہم بھی احتجاج کا حصہ بنیں اور مزید مسائل پیدا ہوں۔ کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ سے کاروبار تباہ اور ان میں موجود سامان ناکارہ ہوچکا ہے، حکومت کو تنبیہ کرتے ہیں کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ کو فی الفور بند کیا جائے۔

ٹرانسپورٹر ز رہنماؤں نے کہا کہ وزیر داخلہ، آر پی او، سی پی او راولپنڈی سمیت سب سے ملاقاتیں کیں شنوائی نہیں ہوئی۔ حکومتی ہدایت پر صرف میانوالی اور اٹک میں اب بھی آٹھ سو سے زائد پکڑے گئے کنٹینرز موجود ہیں جن میں پھل، سبزیاں، ادوایات اور دیگر اشیائے ضروریہ موجود ہیں جو خراب ہورہی ہیں جبکہ شدید گرمی میں کنٹینرز کے ڈرائیورز اور دیگر عملے کا بھی کوئی پرسان حال نہیں ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More