نئے سینما گھر،پروڈکشن ہاؤسز کا قیام، پانچ سال تک انکم ٹیکس سے مستثنیٰ قرار

اسلام آباد: فلم کی صنعت کیلئے وفاقی بجٹ میں بڑا ریلیف، نئے سینما گھروں، پروڈکشن ہاؤسز، فلم میوزیم کے قیام کو پانچ سال تک انکم ٹیکس سے مستثنیٰ قراردے دیا گیا۔فلم،ڈراموں کیلئےمشینری،آلات،سازوسامان کی درآمد پر5سال کسٹم ڈیوٹی ختم کی جائے گی ۔ نیشنل فلم انسٹیٹیوٹ،اسٹوڈیو،پوسٹ فلم پروڈکشن کی لاگت 1ارب روپےہوگی ۔سینما،پروڈکشن ہاؤسز،فلم میوزیمز،پوسٹ پروڈکشن فسیلٹی کوکارپوریٹ کادرجہ ملےگا۔

نئے سینما گھروں، پروڈکشن ہاؤسز، فلم میوزیم کے قیام پر 5 سال تک انکم ٹیکس کا استثنیٰ ہوگا۔بجٹ دستاویز کے مطابق فلم اور ڈرامے کی ایکسپورٹ پر ٹیکس ریبیٹ دیا جائے گا، فلم سازوں کے لئے پانچ سال تک ٹیکس ہولیڈے ہوگا جبکہ صنعتوں کو لوڈشیڈنگ سے مستثنیٰ کیا جائے گا۔

فلم،ڈرامہ ایکسپورٹ پر ٹیکس ریبٹ اسکیم 10سال کیلئےہوگی، سینما اور فلم پروڈیوسز سے انکم ٹیکس نہیں لیا جائے گا،نیشنل فلم انسٹیٹیوٹ،اسٹوڈیواورپوسٹ فلم پروڈکشن فسیلٹی قائم ہوگی۔

نیشنل فلم انسٹیٹیوٹ،اسٹوڈیو،پوسٹ فلم پروڈکشن کی لاگت 1ارب روپےہوگی،سینما،پروڈکشن ہاؤسز،فلم میوزیمز،پوسٹ پروڈکشن فسیلٹی کوکارپوریٹ کادرجہ ملےگا۔فارن فلم پروڈیوسرکو 70فیصد ریبیٹ کیلئے، شوٹنگ پاکستان میں کرنےکی شرط عائد کی جائے گی اور ڈسٹری بیوٹرز، پروڈیوسرزپرعائد8فیصد ودہولڈنگ ٹیکس ختم کیا جائے گا۔

فلم،ڈراموں کیلئےمشینری،آلات،سازوسامان کی درآمد پر5سال کسٹم ڈیوٹی ختم کی جائے گی، نئی فلم اورڈراموں کے لیے آلات منگوانے پر سیلز ٹیکس صفر اور انٹرٹیمنٹ ڈیوٹی ختم کی جائے گی۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More