توہین مذہب کیس: اسلام آباد ہائیکورٹ نے پی ٹی آئی قیادت کے خلاف تحریری حکمنامہ جاری کردیا

اسلام آباد: اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ٹی آئی قیادت کے خلاف توہین مذہب مقدمات کے خلاف دائر درخواستوں پر تحریری حکمنامہ جاری کردیا۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے پانچ صفحات پر مشتمل تحریری حکمنامہ جاری کیا۔

حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ حکومت یقینی بنائے پی ٹی آئی قیادت کے واقعے میں ملوث ہونے کے ٹھوس شواہد کے بغیر مقدمہ درج نہیں ہوگا۔

تحریری حکم نامے میں کہا گیا کہ ریاست کی ذمہ داری ہے یقینی بنائے کوئی سیاسی یا ذاتی مفاد کے لیے مذہب کا استعمال نہ کرسکے، ماضی میں ریاستی عناصر کی جانب سے مذہب کےغلط استعمال نے لوگوں کی زندگیاں خطرے میں ڈالیں۔

حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ مذہب کی بنیاد پر غلط مقدمات سے پیدا ہونے والا ماحول عدم برداشت اور ماورائے عدالت قتل کا باعث بنا، مشال خان اور سری لنکن شہری کا بہیمانہ قتل اس کی مثال ہیں۔

تحریری حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کے قتل بنیادی حقوق کی سنگین خلاف ورزی اور آئین کے تحت چلنے والے معاشرے میں نا قابلِ برداشت ہیں، مذہب یا مذہبی جذبات کا ذاتی یا سیاسی مفادات کے لیے استعمال خود سے توہینِ مذہب ہے، تسلیم شدہ ہے جہاں وقوعہ ہوا تحریک انصاف کی قیادت وہاں موجود نہ تھی۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More