بھارت میں اذان مخالف اقدامات، پاکستان کی شدید مذمت

اسلام آباد: پاکستان نے بھارتی ریاست کرناٹک میں اذان مخالف اقدامات کی شدید مذمت کی ہے۔ دفتر خارجہ نے بھارتی حکومت سے اقلیتوں کے حقوق کو یقینی بنانے کا مطالبہ کردیا۔

دفتر خارجہ کے ترجمان نے بھارتی ریاست کرناٹک کی مساجد میں اذان روکنے کے اقدامات کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی معاشرے میں مسلم مخالف تعصبات بے نقاب ہورہے ہیں۔

دفتر خارجہ نے مساجد کے لاؤڈ اسپیکرز پر ہندو عقیدتی گیتوں کو بجانے کی بھی مذمت کی۔ ترجمان نے کہا کہ ہندو جنونی گروپوں نے نام نہاد اذان سے آزادی مہم شروع کی ہے۔ نئی مہم بی جے پی کے زیر اقتدار بھارت میں نئی سطح کو ظاہر کرتی ہے۔

ترجمان نے کہا کہ مختلف ریاستوں میں مساجد سے زبردستی اسپیکر بھی ہٹائے جارہے ہیں۔ بھارتی حکومت اقلیتوں کی حفاظت، سلامتی اور بہبود کو یقینی بنانا چاہیے۔

ترجمان نے مطالبہ کیا کہ بھارت تشدد کے واقعات کی شفاف تحقیقات کروائے۔

خیال رہے کہ بھارت میں ہندو انتہا پسند رہنما راج ٹھاکرے نے بھارت میں مساجد سے آنے والی اذانوں کی آوازوں کو کم رکھنے کا مطالبہ کیا تھا۔ راج ٹھاکرے کا کہنا تھا کہ اگر ایسا نہیں کیا گیا تو ان کی جماعت کے کارکن مساجد کے باہر بھارتی رسوم بطور احتجاج ادا کریں گے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More