لاہورہائیکورٹ نے علی ترین کو بھجوائے گئے نوٹس معطل کردئیے

لاہور ہائیکورٹ نے جہانگیر ترین کے بیٹے علی ترین کو غیرملکی اثاثے ڈکلیئر نہ کرنے کے معاملے پر ایف بی آر کے بھجوائے گئے نوٹس تاحکم ثانی معطل کردئیے۔ عدالت نے سیکرٹری ریونیو ڈویژن، چئیرمین ایف بی آر سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری کرکے جواب بھی طلب کرلیا۔

جسٹس شاہد کریم نے جہانگیر ترین کے بیٹے علی خان ترین کی درخواست پر سماعت کی۔ درخواست میں موقف اپنایا گیا کہ ایف بی آر نے تین کروڑ چھتیس لاکھ اڑتیس ہزار چھ سو دو برطانوی پاؤنڈز کے اثاثے ڈکلئیر نہ کرنے کا بلاجواز نوٹس بھجوایا جبکہ اثاثوں کی ڈیکلریشن کے معاملے پر درخواست پہلے ہی ہائیکورٹ میں زیر التواء ہے۔ درخواستگزار کے مطابق اظہار وجوہ نوٹس بھجوانے سے قبل انکم ٹیکس آرڈیننس کے قانونی تقاضے پورے نہیں کئے گئے اور ایف بی آر نوٹس میں کہیں نہیں لکھا کہ بیرون ملک اثاثوں کی ملکیت علی ترین کے نام پر ہے۔

عدالت نے دلائل سننے کے بعد ایف بی آر کی جانب سے علی خان ترین کو بھجوائے گئے نوٹس تاحکم ثانی معطل کردئیے اور سیکرٹری ریونیو ڈویژن، چئیرمین ایف بی آر سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کرلیا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More