کراچی میں موٹرسائیکل چھیننے کی وارداتوں 86 فیصد اضافہ

کراچی: شہر قائد میں اسٹریٹ کرائم کی وارداتوں میں بے تحاشہ اضافہ ہو گیا۔ سی پی ایل سی کی رپورٹ کے مطابق وارداتوں میں پندرہ فیصد سے زائد کا اضافہ ہو گیا۔

دنیا کے بڑے شہروں میں شمار ہونے والا میٹرو پولیٹن سٹی کراچی 2021 میں بھی جرائم پیشہ عناصر کے رحم و کرم پر رہا۔پاکستان کے سب سے بڑے شہر میں اسٹریٹ کرائم بڑھتا جا رہا ہے۔ سال 2021 میں اسٹریٹ کرائم کی وارداتیں 75 ہزار سے تجاوز کرگئی۔850 سے زائد شہری ڈکیتی مزاحمت پر زخمی بھی ہوئےجبکہ گزشتہ سال یہ تعداد 622 تھی۔

سی پی ایل سی رپورٹ کے مطابق سال 2021 میں کراچی کے شہری 48 ہزار سے زائد موٹرسائیکلوں، 25 ہزار سے زائد موبائل فونز سے محروم ہوگئے۔جنوری تا دسمبرشہریوں کی دو ہزار سے زائد گاڑیاں بھی چوری اور چھین لی گئیں۔

سی پی ایل سی حکام کے مطابق سال 2020 کی نسبت رواں برس موٹر سائیکل چھیننے کی وارداتوں میں 86فیصد جبکہ چوری میں 34فیصد اضافہ ہوا۔ گاڑی چوری کے واقعات21 فیصد اور چھیننے کے 19 فیصد بڑھے۔گزشتہ برس کے مقابلے میں رواں سال موبائل فون چھیننے کی بھی 18 فیصد واداتیں زیادہ ہوئیں۔

سی پی ایل سی رپورٹ کے مطابق سال 2020 میں موٹر سائیکل چوری کی31999 اور چھیننے کی 2228 وارداتیں ہوئی تھیں ۔ گزشتہ برس شہریوں کو 19ہزار 780موبائل فونز اور 1580گاڑیوں سے محروم کیا گیا تھا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More