گورنر پنجاب نے عثمان بزدار کا استعفی آئینی اعتراض لگا کرمسترد کردیا

لاہور: گورنر پنجاب نے عثمان بزدار کا استعفی آئینی اعتراض لگا کرمسترد کردیا۔

گورنر پنجاب عمرسرفرازنے عثمان بزدار کا استعفی مستردکرکے اسپیکرپنجاب اسمبلی کو خط لکھ دیا۔اسپیکر پنجاب اسمبلی پرویز الہیٰ کو گورنر عمر سرفراز چیمہ کا خط موصول ہو گیا۔ خط کے مطابق استعفی آئین کے آرٹیکل 130کی ذیلی سیکشن8کے تقاضے پورے نہیں کرتا۔سردار عثمان بزدار کا استعفی وزیر اعظم کو بھجوایا گیاجو آئینی طور پر غلط ہے۔

عثمان بزدار نے استعفیٰ گورنر کے نام دیا ہی نہیں۔ مبینہ استعفیٰ ٹائپ کر کہ وزیر اعظم کو لکھا گیا تھا اور مذکورہ دفتر میں جمع کرایا گیا۔ پاکستان کے آئین کے مطابق اس مواصلت کو استعفیٰ کا خط نہیں سمجھا جا سکتا۔ آئین کے مطابق وزیر اعلیٰ کا استعفیٰ درست ہونے کے لیے ضروری ہے کہ وزیر اعلیٰ کا استعفیٰ کا ہاتھ سے لکھا ہو۔ خط میں گورنر پنجاب سے مخاطب ہونا ضروری ہوتا ہے۔

خط میں کہا گیا ہے کہ بدقسمتی سے اس وقت کے گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے آئین کے آرٹیکل 130 (8) کے مضمرات کو مدنظر نہہیں رکھا۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار کا استعفیٰ مسترد ہونے کے بعد پنجاب کابینہ بھی بحال ہو گئی۔ ذرائع پی ٹی آئی کے مطابق عثمان بزدار کو فوری پنجاب کابینہ کا اجلاس بلانے کی تجویز دے دی گئی ہے

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More