خیبرپختونخوا میں اومی کرون کے پھیلاؤ میں تیزی

پشاور: خیبر پختونخوا میں اومی کرون کے پھیلاو میں مزید تیزی آ گئی۔ صوبے میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں اومی کرون کی مزید11نئے کیسز سامنے آگئے جس کے بعد کیسز کی تعداد بڑھ کر75ہو گئی۔

خیبر پختونخوا میں اومی کرون کے پھیلاو میں مزید تیزی آگئی. صوبے میں گزشتہ 24 گھنٹوں میں اومی کرون کی مزید 11 نئے کیسز سامنے آگئے جس کے بعد کیسز کی تعداد بڑھ کر75 ہو گئی۔ نئے کیسز میں پانچ کا تعلق پشاور جبکہ چارسدہ میں تین خیبر اور کرک میں ایک ایک فرد میں اومی کرون کی تشخیص ہوئی ہے۔ نئے گیارہ کیسز میں سے سات مرد اور چار خواتین شامل ہیں۔

متاثرہ افراد میں زیادہ تعداد پشاور میں بسنے والوں کی ہے جو اکتالیس ہے۔ اومی کرون سے متاثرہ افراد کی عمریں بیس سے چالیس سال کے درمیان ہیں ۔ ڈائریکٹر ہیلتھ کے مطابق ڈی ایچ او کو اومی کرون کا کیس سامنے آتے ہی متعلقہ ڈپٹی کمشنر کو مطلع کرنے کا پابند بنایا گیا ہے، زیادہ تر کیسز پوش علاقوں کے درمیانے عمر کے لوگوں میں سامنے آئے ہیں پچھلے آٹھ دس دنوں اومیکرون وائرس کے 113 ٹیسٹ ہوئے جن میں 52 افراد میں اومیکرون وائرس کی تشخیص ہوئی۔

ترجمان محکمہ صحت کے مطابق اومی کرون کے پیش نظر طورخم بارڈراور پشاور ایئر پورٹ پر افغانستان اور بیرون ملک سے آنے والے افراد کو اومی کرون کے ٹیسٹ کے بعد ہی پاکستان میں داخلے کی اجازت دی جاتی ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More