الیکشن کمیشن نے اعظم سواتی کو جواب جمع کروانے کی مہلت دے دی

اسلام آباد: الیکشن کمیشن نے وفاقی وزیر ریلوے اعظم سواتی کو جواب جمع کروانے کیلئے مہلت دے دی۔ الیکشن کمیشن میں دوران سماعت پی ٹی آئی اراکین کی بڑی تعداد روسٹم پر پہنچی تو کمیشن نے تمام اراکین کو روسٹم سے ہٹا دیا۔

الیکشن کمیشن میں ممبرز ناصر درانی اور شاہ محمد جتوئی پر مشتمل دو رکنی کمیشن نے وفاقی وزیر ریلوے کو الیکشن کمیشن کے خلاف بیان بازی کے نوٹس کی سماعت کی۔ دوران سماعت اعظم سواتی کے وکیل علی ظفر نے کہا کہ ہمیں الیکشن کمیشن کا دوسرا نوٹس نہیں ملا ہمیں آج پتہ چلا کہ الیکشن کمیشن نے دو نوٹس جاری کیے ہیں جس پر کمیشن نے کہا کہ اعظم سواتی گزشتہ سماعت پر موجود تھے دوسرا نوٹس انکے علم میں ہے۔

علی ظفر نے کہا مجھے شوکاز نوٹس کا جواب دینے کے لیے وقت چاہیے ابھی یہ فیصلہ نا دیں، اگلی سماعت صرف جواب کے لیے رکھیں اور میرے دلائل سن کر فیصلہ کریں۔ ممبر شاہ محمد جتوئی کے استفسار پر علی ظفر بولے اگر آپ سماعت چارج فریم کے لیے رکھ لیں گے تو تاثر جائے گا کہ آپ فیصلہ کر بیٹھے ہیں جس پر ممبر نثار درانی نے کہا کہ بتایا جائے کہ آپ کی طرف سے پہلے کیا تاثر جاچکا ہے۔

اسی دوران پی ٹی آئی اراکین کی بڑی تعداد روسٹرم پر پہنچ گئی جس پر کمیشن نے تمام اراکین کو روسٹرم سے ہٹا دیا اور کرسیوں پر بیٹھنے کا حکم دیا۔ وکیل علی ظفر نے کہا شوکاز کا جواب دیکھے بغیر کیسے فرد جرم عائد ہو سکتی ہے۔ الیکشن کمیشن نے اعظم سواتی نوٹس کیس کی سماعت 16 نومبر تک ملتوی کردی۔

الیکشن کمیشن کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اعظم سواتی کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کو مضبوط کرنا ہمارا اور الیکشن میں شفافیت لانا ہمارا مشن ہے۔ پارلیمنٹ قانون بنا کر دے گی جس کے تحت دوہزار تئیس میں بہترین انتحاب ہوگا۔ صحافیوں نے سوال پوچھنا شروع کیے تو اعظم سواتی اور دیگر وزرا کوئی سوال لیے بغیر الیکشن کمیشن سے روانہ ہوگئے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More