روس کا امریکا پر یوکرین میں حیاتیاتی ہتھیار بنانے کا الزام، امریکا کی تردید

ویب ڈیسک: روس نےامریکا پر یوکرین میں حیاتیاتی ہتھیار بنانے کا الزام لگا دیا۔امریکا نے الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے ماسکو جلد ہی یہ ہتھیار یوکرین میں استعمال کر سکتا ہے۔

روسی وزارت خارجہ نے دعویٰ کیا ہے کہ دستاویزی ثبوت ہیں کہ امریکا یوکرین میں حیاتیاتی ہتھیار بنارہا۔ ترجمان روسی وزارت خارجہ ماریہ زخارووا کا کہنا ہے کہ ماسکو زیلنسکی کا تختہ الٹنے کے لیے یہ کام نہیں کر رہا، امریکا عالمی برادری کے سامنے یوکرین میں اپنے اس پروگرام کی وضاحت دینے کا پابند ہے۔

امریکا نے روس کے اس دعوے کو مسترد کرتے ہوئے روس کی جانب سے لگائے گئے یہ الزامات اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہیں کہ ماسکو جلد ہی یہ ہتھیار یوکرین میں استعمال کر سکتا ہے۔ امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ کریملن جان بوجھ کر یہ جھوٹ پھیلا رہا ہے کہ امریکا اور یوکرین کیمیائی اور حیاتیاتی ہتھیاروں کی سرگرمیاں کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ روس یوکرین میں اپنے خوفناک اقدامات کو جواز فراہم کرنے کی کوشش میں جھوٹے بہانے گھڑ رہا ہے۔ وائٹ ہاؤس کے پریس سیکریٹری جین ساکی کہا ہے کہ ہم سب کو نظر رکھنی چاہیے کہ روس ممکنہ طور پر یوکرین میں کیمیائی یا حیاتیاتی ہتھیاروں کا استعمال کر سکتا ہے یا ان کا استعمال کرتے ہوئے کوئی جھوٹا فلیگ آپریشن کر سکتا ہے

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More