اسرائیل کی غزہ پر وحشیانہ بمباری، 15 فلسطینی شہید 55 زخمی

غزہ: اسرائیل کی غزہ پر وحشیانہ بمباری، اسرائیلی حملوں میں 15 فلسطینی شہید اور 55 سے زائد زخمی ہو گئے۔

اسرائیلی حملے کے بعد فلسطینی اسلام جہاد تنظیمو ں کی جوابی کارروائی میں اسرائیل پر 100 راکٹ داغے گئے، تاہم زیادہ تر کو اسرائیل کی آئرن ڈوم میزائل ڈیفنس شیلڈ نے روک دیا۔ اسرائیل کی جانب سے غزہ میں کیے جانے والے حملے کے نتیجے میں ایک عسکریت پسند کمانڈر سمیت 10 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ غزہ پر وحشیانہ بمباری کے بعد اطلاعات ہیں کہ اسرائیل نے فلسطینی عسکریت پسند کمانڈر تيسير الجعبری کی جانب سے مبینہ طور پر دی جانے والی دھمکیوں کے ردعمل میں یہ کارروائی کی تھی۔

مقامی وزارت صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں ایک بچی بھی شامل ہے جبکہ درجنوں افراد زخمی ہوئے ہیں۔ یہ کارروائی گذشتہ دنوں غرب اردن میں فلسطینی اسلامک جہاد، پی آئی جے کے ایک سرکردہ رہنما کی گرفتاری سے پیدا ہونے والے تناؤ کے بعد کی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیے: اسرائیل کی فلسطینی آبادیوں پر ایک بار پھر بمباری

اسرائیلی وزیر اعظم یائیر لاپڈ نے عوام سے ٹی وی پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل نے ایک فوری خطرے کے خلاف دہشت گردی کے خلاف ایک درست آپریشن کیا۔ اسرائیل کی دفاعی افواج آئی ڈی ایف نے کہا ہے کہ اس نے ان جگہوں کو نشانہ بنایا ہے جو پی آئی جے سے منسلک ہیں۔

اسرائیل کی جانب سے الزام عائد کیا گیا ہے کہ غزہ میں موجود پی آئی جے نے یہ دھمکی دی تھی کہ مرکزی اسرائیل کو بموں سے نشانہ بنایا جائے گا۔ یاد رہے کہ رواں سال کے مہینے جنوری میں اسرائیلی طیاروں نے خان یونس، قادسیہ اور بیت الاھیا سمیت دیگر علاقوں پر بمباری کی تھی۔

خبرایجنسی کےمطابق سام میزائلوں سے لیس اسرائیلی ہیلی کاپٹرز نے بھی غزہ پر حملہ کیا تھا۔ صہیونی فورسز کی جانب سے شمالی غزہ پر ٹینکوں سے گولہ باری بھی کی گئی تھی۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More