سافٹ ویئر میں خرابی، ٹیسلا کی 12 ہزار گاڑیوں کی واپسی

ویب ڈیسک: دنیا کے امیر ترین شخص ایلون مسک کی کمپنی ٹیسلا نے 2017 میں بیچی گئی اپنی 12 ہزار گاڑیاں واپس منگوا لی ہیں۔ جن کے مواصلاتی نظام میں خرابی کی رپورٹس موصول ہوئی ہیں۔

نیشنل ہائی وے ٹریفک سیفٹی ایڈمنسٹریشن کے مطابق مواصلاتی نظام میں خرابی کے باعث گاڑی ٹکرانے کی غلط وارننگ اور ایمرجنسی بریک لگ سکتی ہے، جو خطرنات ثابت ہوتی ہے۔ ایمرجنسی بریکس کے اچانک حرکت میں آنے کی شکایات موصول ہونے کے بعد ہی ٹیسلا نے انسٹال شدہ ایف ایس ڈی 10.3 سافٹ ویئر اپ ڈیٹ ہٹا دی تھی، اور متاثرہ گاڑیوں میں 10.3.1 ورژن انسٹال کیا تھا۔

ایف ایس ڈی سسٹم خودکار ڈرائیونگ کی صلاحیت فراہم کرتا ہے جس کے تحت گاڑی چلانے کے کچھ فنکشنز خود بخود متحرک ہو جاتے ہیں۔ حفاظتی ایجنسی کا کہنا ہے کہ وہ ٹیسلا کے ساتھ رابطے میں رہے گی تاکہ کوئی بھی حفاظتی مسئلہ کو تسلیم کرتے ہوئے اسے صیح کیا جا سکے۔

ٹیسلا کے سربراہ ایلون مسک نے بھی ٹویٹ کی تھی کہ ایف ایس ڈی 10.3 میں کچھ مسائل پیدا ہونے کے بعد وقتی طور پر 10.2 میں واپس منتقل کیا جا رہا ہے۔ 29 اکتوبر کو ٹیسلا نے کہا تھا کہ 99.8 فیصد گاڑیوں میں سافٹ ویئر اپ ڈیٹ کر دیا گیا تھا جس کے بعد کسی قسم کی کارروائی کی ضرورت نہیں رہی ہے۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More