مہنگائی کا جن بے قابو، اشیاء ضروریہ کی قیمتیں 18.1 فیصد تک جا پہنچیں

اسلام آباد: مہنگائی پر قابو پانا حکومت کیلئے مشکل ہوگیا۔ اشیاء ضروریہ کی قیمتوں کے اعشاریہ 18.1 فیصد تک پہنچ گئے۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ایک سال میں 40.81 فیصد اضافہ ہوا۔

مہنگائی کے حوالے سے جاری کی گئی رپورٹ کے مطابق نومبر میں مہنگائی کی شرح 11.9 فیصد تک پہنچ گئی۔ اکتوبر میں مہنگائی کی شرح 9.4 فیصد تھی۔ گزشتہ سال نومبر میں مہنگائی کی شرح 8.3 فیصد تھی۔ مہنگائی 23 ماہ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔

شہروں میں مہنگائی کی شرح 12 فیصد اوردیہاتوں میں مہنگائی 10.9 فیصد رہی۔ اشیاء ضروریہ کی قیمتوں کے اعشاریہ 18.1 فیصد تک پہنچ گئے۔ ہول سیل پرائس انڈیکٹر کی مہنگائی 27 فیصد تک پہنچ گئی۔ دستاویزکے مطابق کور انفلیشن 7.6 فیصد تک پہنچ گئی گزشتہ ماہ کور انفلیشن 6.7 فیصد تھی۔ ا

یک سال میں گھی کی قیمت میں 58.29 فیصد کا اضافہ ہوا۔ خوردنی تیل کی قیمت میں 53.59 فیصد اضافہ ہوا، ایک سال میں دالیں، پھل، آٹا، سبزیاں بھی مہنگی ہوئیں۔ ایک سال میں بجلی کی قیمت میں 47.87 فیصد اضافہ ہوا۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ایک سال میں 40.81 فیصد اضافہ ہوا۔ ادویات کی قیمتوں میں بھی ایک سال میں 11.76 فیصد کا اضافہ ہوا۔

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More