تازہ ترین
بھارت میں مسلمان گائے کا گوشت لے جانے پر بدترین تشدد کا شکار

بھارت میں مسلمان گائے کا گوشت لے جانے پر بدترین تشدد کا شکار

نئی دہلی: (یکم اگست 2020) بھارتی انتہا پسند مسلمانوں کو عید قرباں بھی منانے نہیں دے رہے ۔ گڑہ گاؤں میں ہندو انتہا پسندوں نے گائے کا گوشت لے جانے والے مسلم نوجوان کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا۔ اس غنڈہ گردی کے دوران پولیس خاموش تماشائی بن کر سفاکیت کا یہ کھیل دیکھتی رہی۔

ریاست ہریانہ کے گڑہ گاؤں میں درندگی کا یہ واقعہ پیش آیا جہاں لقمان نامی نوجوان کو انتہا پسندوں نے گھیر لیا ۔ آر ایس ایس اور شیو سینا کے ان دہشت گردوں نے مسلمان پر الزام لگایا کہ وہ گائے کا گوشت لے جارہا تھا جس کے بعد انہوں نے ڈنڈوں ، لاٹھیوں ، ہتھوڑوں اور مکوں سے اس نوجوان کو اتنا مارا کہ وہ خونم خون ہوگیا۔

بدقستمی یہ ہے کہ لقمان گھنٹوں تک تشدد کا نشانہ بنتا رہا لیکن قریب کھڑی پولیس اس کی مدد کو نہ آئی ۔ بڑی مشکل سے وہ جان بچا کر اسپتال گیا جبکہ پولیس نے ہندو انتہا پسندوں کو دیکھتے اور جانتے ہوئے بھی مقدمہ نامعلوم افراد کے خلاف درج کرلیا ہے ۔

Comments are closed.

Scroll To Top