تازہ ترین
سپریم کورٹ میں شریف خاندان کی نیب ریفرنسز یکجا کرنے کی اپیل پھر مسترد

سپریم کورٹ میں شریف خاندان کی نیب ریفرنسز یکجا کرنے کی اپیل پھر مسترد

اسلام آباد : (21 فروری 2018) چیف جسٹس سپریم کورٹ نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے کی درخواست بحالی اپیل مسترد کر دی ہے۔

یہ ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیے

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف نے نیب ریفرنسز یکجا کرنے کیلئے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی تھی جس پر رجسٹرار آفس نے اعتراضات عائد کئے تھے۔
چیف جسٹس ثاقب نثار نے درخواست بحالی کی اپیل پر چیمبر میں سماعت کی، شریف فیملی کی جانب سے ایڈووکیٹ عائشہ حامد پیش ہوئیں،چیف جسٹس آف پاکستان نے چیمبراپیل خارج کرکے رجسٹرارآفس کے اعتراضات برقراررکھے۔سابق وزیراعظم نے چیمبر اپیل خارج کرنے کے فیصلہ کو آئینی درخواست سے چیلنج کیا تھا ، آئینی درخواست پر رجسٹرار آفس نے اعتراضات عائد کئے تھے ۔ دوسری آئینی درخواست پر اعتراضات کیخلاف پھر چیمبر اپیل دائر کی گئی جسے مسترد کر دیا گیا۔ دوسری جانب احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے سابق وزیر اعظم ان کی بیٹی اور داماد کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواستیں مسترد کرنے کا حکم نامہ جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ اہلیہ کی بیماری کو ملزم کی عدالت حاضری سے استثنیٰ کا جواز نہیں بنایا جا سکتا ، جبکہ وڈیولنک کے ذریعے بیان ریکارڈ کرنے کے موقع پر لندن جا کر اٹارنی مقرر کرنے کا جواز بھی قابل تسلیم نہیں ۔عدالتی حکم نامے کے مطابق میڈیکل رپورٹ میں کلثوم نواز کی کیمو تھراپی کے 6 سائیکلز مکمل ہو گئے ہیں ۔ مریضہ کی بیماری پر کافی حد تک قابو پا لیا گیا ہے ، کینسر کے رسک کو کم کرنے اور مستقبل میں علاج کے لیے ریڈیو تھراپی کی تجویز دی گئی ہے۔واضح رہے کہ ایون فیلڈ ریفرنس اور ضمنی ریفرنسز کی سماعت کل احتساب عدالت میں ہوگی جس کے دوران استغاثہ کے دو غیرملکی گواہ فرانزک ماہر رابرٹ ریڈلی اور اختر راجہ کے بیانات ویڈیو لنک کے ذریعے قلمبند کیے جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیے

سابق وزیراعظم کے خلاف مزید 2 ضمنی ریفرنسز سماعت کے لیے مقرر

سابق وزیراعظم کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت 26 فرروی تک ملتوی

Comments are closed.

Scroll To Top