تازہ ترین
اسپیکر سندھ اسمبلی کن الزامات کے تحت گرفتار ہوئے

اسپیکر سندھ اسمبلی کن الزامات کے تحت گرفتار ہوئے

اسلام آباد: (20 فروری 2019) نیب کے ہاتھوں اسلام آباد سے گرفتار ہونے والے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی پر کیا الزامات ہیں

سندھ اسمبلی کے اسپیکر آغا سراج درانی آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں نیب کو مطمئن نہ کرسکے تو نیب نے اسلام ٓباد سے گرفتار کرلیا۔ ملزم آغا سراج درانی سے پوچھا گيا تھا کہ کلفٹن، ڈيفنس ميں بنگلے پلاٹس کہاں سے آئے۔ لاڑکانہ، شکار پور ميں زمينيں کہاں سے آئيں۔ مگر تسلی بخش جواب نہ ملا۔ صرف آغا سراج ہی نہيں آمدن سے زائد اثاثے رکھنے کے الزام ميں درانی فيملی کے کئی افراد فہرست ميں شامل ہيں جن سے بھی تفتيش ہوگی۔

آغا سراج درانی پر مزيد الزامات ہيں کہ جب سندھ اسمبلی کی نئی عمارت کي تعمير شروع ہوئی تو لاگت 3 ارب روپے تھی۔ آغا سراج درانی کے دور تک لاگت 10 ارب روپے سے بھي زائد ہوگئی۔ اس پر بھی تفتيش ہوگی۔ 2012 اور 13 ميں جب آغا سراج درانی وزير بلديات تھے۔ تو ان پر جعلی بھرتيوں کے الزامات لگے۔ اس پر بھی تحقيقات ہورہی ہيں۔

سندھ اسمبلی کے ايم پی اے ہاسٹل کي تعمير ميں حد س زيادہ اخراجات بڑھانے کا الزام بھی آغا سراج پر عائد ہے۔ سندھ اسمبلی کی پارکنگ کي تعمير ميں بھی مبينہ کرپشن کے الزام ميں بھی آغا سراج دراني کا نام سامنے آيا ہے۔

اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی سابق آمر پرویز مشرف کے دور میں بھی محکمہ تعلیم کی وزارت کے دوران فرنیچر خریدنے کے کیس میں نیب کی تحویل اور جیل میں رہ چکے ہیں۔

Comments are closed.

Scroll To Top