تازہ ترین
شہباز شریف کی درخواست ضمانت کی سماعت، نیب وکیل کے دلائل مکمل

شہباز شریف کی درخواست ضمانت کی سماعت، نیب وکیل کے دلائل مکمل

لاہور: (12 فروری 2019) ہائیکورٹ میں رمضان شوگر ملز کیس میں شہباز شریف کی درخواست ضمانت پر نیب وکیل نے دلائل مکمل کرلیے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ ہمیں مطمئن کیا جائے کہ نالے کو رمضان شوگر مل کی جانب موڑنے کی وجہ کیا تھی۔ عدالت نے شہباز شریف کے وکیل کو کل دلائل جاری رکھنے کا حکم دیا ہے۔

لاہور ہائیکورٹ میں آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل اور رمضان شوگر ملز کیس میں شہباز شریف کی درخواست ضمانتوں پر سماعت ہوئی۔ جسٹس ملک شہزاد احمد اور جسٹس مرزا وقاص رؤف پر مشتمل دورکنی بنچ کے روبرو شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز اور نیب پراسیکیوٹر اکرم قریشی نے دلائل دیئے۔

نیب وکیل نے بتایا کہ رمضان شوگر ملز نے نالہ بنانے کے بجائے ایک تالاب بنا دیا جہاں آلودہ پانی جمع ہوتا ہے۔ پل کا فائدہ صرف اور صرف رمضان شوگر ملز کو ہوا جس کو بنانے کیلئے شہباز شریف نے دو کروڑ کے فنڈز جاری کرنے کا حکم دیا تھا۔

عدالتی استفسار پر نیب وکیل نے بتایا کہ رحمت اللہ کو ملزم بنایا نہ ہی نالے کی اراضی کا ریکارڈ قبضے میں لیا گیا ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ آپ نے اصل شخص کو ملزم قرار دیئے بغیر ہی کیس بنا دیا۔ عدالت نے استفسار کیا کہ نیب کے نزدیک شہبازشریف نے رمضان شوگر ملز کے قریب نالہ بنا کر غیرقانونی کام کیا؟ جبکہ حمزہ شہباز کو گرفتار کیوں نہیں کیا گیا؟

جس پر نیب وکیل نے بتایا کہ حمزہ شہباز ہم سے تعاون کر رہے ہیں۔ جب کوئی تعاون نہیں کرتا تب اسے گرفتار کرتے ہیں۔

شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز نے بتایا کہ نالہ رمضان شوگر ملز کیلئے نہیں بلکہ سات مختلف آبادیوں کیلئے بنایا گیا تھا۔ نالہ سالانہ ڈویلپمنٹ پلان کا حصہ تھا جس کی پنجاب اسمبلی سے منظوری بھی لی۔

عدالت نے شہباز شریف کی درخواست ضمانت پر مزید سماعت کل تک ملتوی کردی۔

Comments are closed.

Scroll To Top