تازہ ترین
توہین عدالت کیس میں طلال چوہدری 5 سال کے لئے نا اہل قرار

توہین عدالت کیس میں طلال چوہدری 5 سال کے لئے نا اہل قرار

اسلام آباد:(02 اگست،2018) سپریم کورٹ نے توہین عدالت کیس میں طلال چوہدری کو پانچ سال کے لئے نا اہل قرار دیتے ہوئے عدالت برخاست ہونے تک کی سزا سنادی ہے۔

تفصیلات کے مطابق عدالتی فیصلے میں طلال چوہدری کو توہین عدالت کے مرتکب قرار دیا گیا ہے جبکہ ان پر ایک لاکھ روپے جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے، سابق وزیر مملکت برائے داخلہ کو آرٹیکل تریسٹھ ون جی کے تحت سزا سنائی گئی ہے۔

اس سے قبل سپریم کورٹ نے طلال چوہدری کے خلاف گیارہ جولائی کو توہینِ عدالت کیس کا فیصلہ محفوظ کیا تھا، فیصلے کے دن ملزم کو عدالت میں حاضری یقینی بنانے کا حکم بھی دیا تھا۔جسٹس گلزار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے گیارہ جولائی کو فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

براہ راست دیکھیئے

Posted by Abbtakk on Wednesday, August 1, 2018

طلال چوہدری کے خلاف ہونے والی اہم سماعتیں

چوبیس فروری کو توہین عدالت کیس میں طلال چوہدری نے عبوری تحریری جواب سپریم کورٹ میں جمع کرایا تھا، طلال چوہدری نے اپنے جواب میں کہا تھا کہ عدالت کی تضحیک نہیں کی، توہین کا سوچ بھی نہیں سکتا، میڈیا نے میرے بیان کو سیاق وسباق سے ہٹ کر پیش کیا۔

طلال چوہدری نے تحریری جواب میں کہا تھا کہ کبھی دانستہ، غیر دانستہ کوئی عمل نہیں کیا جس سے توہین عدالت ہو، انہوں نے اپنے جواب میں کہا تھا کہ نہیں معلوم کس مواد کی بنیاد پرتوہین عدالت کارروائی شروع ہوئی، تفصیلات دی جائیں تاکہ اس کے مطابق جواب دے سکوں۔ سپریم کورٹ نے یکم فروری کو طلال چوہدری کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا تھا اور انہیں چھ فروری کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا گیا تھا۔

ویڈیودیکھنے کےلیے پلے کابٹن دبائیں

تئیس مئی کو توہین عدالت کیس میں سابق وزیر مملکت برائے داخلہ طلال چوہدری نے اپنے دفاع میں سترہ گواہان کی فہرست سپریم کورٹ میں جمع کرائی تھی، سینیٹر مصدق ملک، مریم اورنگزیب، عاشق حسین کرمانی گواہان کی فہرست میں شامل تھے۔

چودہ مئی کو جسٹس اعجاز افضل کی ریٹائرمنٹ کے بعد طلال چوہدری کے خلاف توہین عدالت کیس کا سماعت کرنے والا بینچ تحلیل ہوگیاتھا، جس پر چیف جسٹس آف پاکستان نے بارہ مئی کو جسٹس گلزا ر احمد کی سربراہی میں تین رکنی بینچ تشکیل دیا تھا،جبکہ جسٹس سردار طارق اورجسٹس فیصل عرب بینچ کا حصہ بنایا گیا۔

ویڈیودیکھنے کےلیے پلے کابٹن دبائیں

تیس اپریل کو ہونے والی سماعت کو بغیر کارروائی کے معطل کردیا گیا تھا جبکہ چھ اپریل کو ہونے والی سماعت کے موقع پر عدالت عظمیٰ نے آئندہ پیشی پر طلال چوہدری کا بیان ریکارڈ کرنے کا حکم دیا تھا، توقع ہے کہ آج طلال چوہدری کا بیان ریکارڈ کیا جائے گا۔

چھ اپریل کو ہونے والی سماعت میں استغاثہ کے گواہ ڈی جی مانیٹرنگ پیمرا حاجی آدم عدالت میں پیش ہوئے ، جس پرطلال چوہدری کے وکیل کامران مرتضیٰ نے اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ گواہ سے متعلق معلومات حاصل نہیں کی گئی۔

پندرہ مارچ کو جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری پر توہین عدالت کیس میں فرد جرم عائد کی تھی۔

واضح رہے کہ یکم فروری کو عدلیہ مخالف تقریر پر آرٹیکل 184 (3) کے تحت چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا تھا۔

طلال چوہدری نے جڑانوالہ کے جلسے میں مبینہ طور پر ججز کے خلاف توہین آمیز زبان استعمال کی تھی، وہ اس سے قبل بھی پاناما کیس کے سلسلے میں شریف خاندان کے مالی اثاثوں کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی اور عدلیہ پر تنقید کرچکے ہیں۔

ویڈیودیکھنے کےلیے پلے کابٹن دبائیں

واضح رہے کہ اس سے قبل عدالت عظمیٰ نے اٹھائیس جون کو سابق وفاقی وزیر برائے نجکاری دانیال عزیز کو توہین عدالت کا مرتکب قرار دیتے ہوئے پانچ سال کے لئے نااہل قرار دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

طلال چوہدری کے خلاف توہین عدالت کا فیصلہ آج سنایا جائے گا

دانیال عزیز کی نااہلی کا تحریری فیصلہ جاری

Comments are closed.

Scroll To Top