تازہ ترین
سانحہ قصور: جے آئی ٹی فائرنگ کا حکم دینے والے کی تلاش میں

سانحہ قصور: جے آئی ٹی فائرنگ کا حکم دینے والے کی تلاش میں

لاہور: (11 جنوری 2018) سانحہ قصور کی تشکیل کردہ جے آئی ٹی ایک سوال کے جواب کی تلاش میں ہے کہ فائرنگ کا حکم کس نے دیا۔ سابق ڈی پی او قصور اور متلقہ ڈی ایس پی نے تو حکم دیا ہی نہیں۔ اور فائرنگ میں ملوث اہلکاروں نے بھی اس سوال پر چپ سادھ لی ہے جبکہ ایک کو بچانے کی کوشش بھی کی جارہی ہے۔

سانحہ قصور کی جے آئی ٹی کے سامنے اہم سوال، فائرنگ کا حکم کس نے دیا؟ کیا ڈی پی او یا متعلقہ ڈی ایس پی نے مظاہرین پر فائر کھولنے کا حکم دیا۔گرفتار اہلکاروں نے بھی چپ سادھ لی معاملہ مزید اہمیت اختیار کر گیا۔

مظاہرین پر فائرنگ کے دوران اہلکار کون تھے جنہوں نے سیدھے فائر کرنے سے بار بار منع کیا۔کیا ڈی سی آفس کے اہلکار تھے یا متعلقہ تھانے کےکون سیدھے فائر کرنے سے روکتا رہا اس سوال کا جواب بھی تلاش کرنا ضروری ہے۔

فائرنگ کےالزام میں چار اہلکار راشد ،شفیق،امانت اور عابد گرفتار کرلیا جبکہ فائرنگ میں ملوث پانچواں اہلکار فیاض بخاری کوگرفتار کیوں نہیں کیا گیا؟ پولیس رپورٹ کے مطابق فیاض بخاری فائرنگ کرنے والوں میں شامل تھا۔ فیاض بخاری کس کا لاڈلہ ہے؟ اس کو بچانے کی کوشش کون کررہا ہے؟ اس سوال کا جواب بھی آنا باقی۔

فائرنگ میں ملوث تمام اہلکار ڈی سی قصور کی ذاتی سیکیورٹی پر متعین تھے ڈی سی اپنے دفتر میں موجود تھیں جبکہ ان کے محافظ آفس کے باہر مظاہرین کے سامنے تھے۔

یہ بھی پڑھیے

قصور: زینب کیس میں 8 مشکوک افراد زیر حراست

 

زینب سے زیادتی و قتل کے واقعے کے بعد ملک بھر میں مظاہرے

Comments are closed.

Scroll To Top