تازہ ترین
پنجاب حکومت نے ساہیوال واقعے میں مرنے والے ذیشان کو دہشتگرد قرار دے دیا

پنجاب حکومت نے ساہیوال واقعے میں مرنے والے ذیشان کو دہشتگرد قرار دے دیا

لاہور: (20 جنوری 2019) پنجاب حکومت نے ساہیوال واقعے میں مرنے والے ذیشان کو دہشتگرد قرار دے دیا۔ صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے کہا ہے کہ سی ٹی ڈی کے مطابق ذیشان داعش کیلئے کام کر رہا تھا۔ مرنے والے خاندان کے لواحقین کو دو کروڑ روپے مالی امداد جبکہ ان کے بچوں کی تعلیمی کا خرچہ پنجاب حکومت برداشت کرے گی۔

لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے کہا کہ انسداد دہشتگردی ڈپارٹمنٹ کے موقف کے مطابق آپریشن سو فیصد انٹیلیجنس معلومات کے مطابق کیا گیا۔ مارے جانے والا شخص ذیشان داعش کیلئے کام کر رہا تھا جس کی گاڑی سے دو خود کش جیکٹیں اور آٹھ ہینڈ گرینیڈ برآمد ہوئے۔

راجہ بشارت نے کہا کہ تیرہ جنوری کو ہنڈا سٹی کار دہشتگردوں کو لے کر ساہیوال گئی۔ اٹھارہ جنوری کو تصدیق ہوئی کہ ذیشان دہشتگردوں کیلئے کام کر رہا تھا۔ انیس جنوری کو سیف سٹی کے کیمروں نے مانگا منڈی کے قریب دیکھا تو سی ٹی ڈی کو کہا گیا کہ کار کو روکا جائے۔ ہم ویڈیو دکھائیں گے کہ ذیشان کی کار دہشتگردوں کے استعمال میں تھی۔

وزیرقانون پنجاب نے کہا کہ گاڑی کا مانگا منڈی کے کیمروں سے پتا چلا۔ گاڑی کو جب روکا گیا تو فائرنگ ہوگئی۔ پہلا فائر ذیشان نے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ کچھ مسنگ لنکس ہیں اسی لیے جے آئی ٹی تشکیل دی ہے جس کی رپورٹ پر من وعن عملدرآمد کیا جائے گا۔

Comments are closed.

Scroll To Top