تازہ ترین
پاکستان اسٹیل ملز کا خسارہ 192 ارب روپے سے تجاوز کر جانے کا انکشاف

پاکستان اسٹیل ملز کا خسارہ 192 ارب روپے سے تجاوز کر جانے کا انکشاف

اسلام آباد: (20 فروری 2019) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی صنعت و پیداوار میں انکشاف کیا گیا ہے کہ پاکستان اسٹیل ملز کا خسارہ ایک سوبانوے ارب روپے سے تجاوز کر گیا۔ ملز تین سال سے بند ہے۔

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی صنعت و پیداوار کا اجلاس سینیٹر احمد خان کی زیرصدارت ہوا۔ اجلاس میں اسٹیل ملز کے چیف فنانشل آفیسر نے انکشاف کیا کہ مارچ دوہزار پندرہ سے اسٹیل ملز بند پڑی ہے۔ خسارے کے باعث کسی پارٹی نے خریدنے میں دلچسپی نہیں لی۔ اسٹیل ملز کا خسارہ ایک سو بانوے ارب روپے ہوگیا ہے۔ ملز میں گزشتہ ڈھائی سال سے سی ای او نہیں ہے۔

چیئرمین کمیٹی نے اظہار برہمی کرتے ہوئے کہا کہ اسٹیل ملز کا بلاسٹ فرنس بند کرنا، بینک سے لیا گیا قرضہ اور گیس کا بل خسارے کا باعث بنے۔ چیئرمین کمیٹی نے سینیٹر نعمان وزیر کی صدارت میں سب کمیٹی کو اسٹیل ملز کا دورہ کرنے کی ہدایت کردی۔

منصوبہ بندی کمیشن حکام نے کمیٹی کو بتایا کہ سی پیک کے صنعتی زونز تاخیر کا شکار ہیں۔ نو صنعتی زونز دوہزار انیس میں شروع ہونا تھے جبکہ صنعتی زونز فزیبلیٹی کے مرحلے میں بھی داخل نہیں ہوسکے۔ بلوچستان، آزاد کشمیر اور فاٹا میں صنعتی زونز کی تیاری صحیح طریقے سے نہیں ہورہی۔ اسلام آباد، سندھ اور کے پی کے میں چار زونز کی گراؤنڈ بریکنگ اگلے چند ماہ میں ہوگی۔

کمیٹی ارکان کا کہنا تھا کہ ان زونز میں زمین کی قیمت بہت زیادہ ہے۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ زونز کی جگہ موجودہ مختص جگہ سے تبدیل کردی جائے تو اراضی کی قیمت میں نمایاں کمی کی جاسکتی ہے۔ کمیٹی نے رونز کی جگہ دس پندرہ کلومیڑ تبدیل کرنے کا جائزہ لینے کیلئے سینیٹر محمد علی سیف کی زیرصدارت ذیلی کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا۔

Comments are closed.

Scroll To Top