تازہ ترین
نگراں وزیراعظم کے لئے جسٹس (ر) ناصر الملک کے نام پر اتفاق

نگراں وزیراعظم کے لئے جسٹس (ر) ناصر الملک کے نام پر اتفاق

اسلام آباد: (28 مئی 2018) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور اپوزیشن لیڈر نے نگراں وزیراعظم کے حوالے سے تاریخی فیصلہ کرتے ہوئے جسٹس (ر) ناصر الملک کو نگراں وزیراعظم بنانے پر اتفاق کرلیا ہے۔

ویڈیو دیکھنے کے لیے پلے کا بٹن دبائیے

تفصیلات کے مطابق پارلیمنٹ ہاؤس میں مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے نگراں وزیراعظم کے نام کا اعلان کیا، اس موقع پر اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق اور وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب بھی موجود تھیں۔

اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا آج تاریخی دن ہے، ہم جمہوری فیصلہ کر رہے ہیں، وزیراعظم اور اسپیکر قومی اسمبلی کا مشکور ہوں، ناصر الملک کی عدلیہ میں تاریخی خدمات ہیں۔انہوں نے کہا پاکستان بڑے مسائل سے گزر رہا ہے، خوشی ہے ہم ایک بار پھر پانچ سال مکمل کر رہے ہیں، پاکستان ایک نئے سفر کی طرف گامزن ہے، امید ہے جو پارٹی بھی الیکشن جیت کر آئے گی وہ عوام کی خدمت کرے گی۔

ویڈیو دیکھنے کے لیے پلے کا بٹن دبائیے

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے خورشید شاہ کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ آج مستقبل کے جمہوری سفرکیلئےاہم دن ہے، نگراں وزیراعظم کے نام پراتفاق رائے ہوا ہے، نگراں وزیراعظم کیلئےنام ایساہےجس پرکوئی انگلی نہیں اٹھاسکتا۔

اس سے قبل وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور خورشید شاہ کی انتہائی اہم ملاقات کے نگراں وزیراعظم کے نام پر ڈیڈلاک ختم ہوگیا تھا۔واضح رہے کہ اس سے قبل دونوں رہنماﺅں میں پانچ ملاقاتیں ہو ئی تھی جن میں نگران وزیراعظم کے نام پر اتفاق رائے نہیں ہو سکا تھا۔

جسٹس (ر) ناصرالملک کا پروفائل

جسٹس ناصر الملک کا تعلق پاکستان کے شمالی مغر بی صوبے خیبر پختونخواہ سے ہے اور وہ 17 اگست 1950 کو سوات میں پیدا ہوئے ۔اُنھیں انیس سو ترانوے میں صوبہ خیبر پختونخوا کا ایڈووکیٹ جنرل تعینات کیا گیا اور انیس سو چورانوے میں اُنھیں پشاور ہائی کورٹ کا جج مقرر کیا گیا ، جسٹس ناصر الملک کو دوہزار چار میں پشاور ہائی کورٹ کا چیف جسٹس جبکہ ایک سال کے بعد سپریم کورٹ کا جج مقرر کیا گیا تھا۔

جسٹس ناصرالملک نے نہ صرف 3 نومبر 2007 کے پی سی او کے تحت حلف اٹھانے سے انکار کیا بلکہ وہ 3 نومبر کی ایمرجنسی کے خلاف حکم امتناع جاری کرنے والے سات رکنی بینچ میں بھی شامل تھے۔پی سی او کے تحت حلف نہ اٹھاکر وہ معزول قرار پائے اور ستمبر 2008 میں پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں دوبارہ حلف اٹھا کر جج کے منصب پر بحال ہوئے۔

جسٹس ناصر الملک پی سی او، این آر او اور اٹھارویں ترمیم کے خلاف درخواستوں کی سماعت کرنے والے بینچوں کا حصہ رہے۔

سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کو توہین عدالت کے جرم میں سزا سنانے والے بینچ کے سربراہ بھی وہی تھے۔ جسٹس ناصر الملک پاکستان کے 22 ویں چیف جسٹس تھے جو 6 جولائی 2014 سے 16 اگست 2015 تک اس منصب پر فائز رہے۔واضح رہے کہ حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) نے بھی نگران وزیرِاعظم کیلئے جسٹس (ر) ناصر الملک، ڈاکٹر عشرت حسین اور تصدق جیلانی کے نام پیش کئے تھے، جس پر اپوزیشن لیڈر نے آج اتفاق کیا۔

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری اور پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری میں مشاورت کے بعد پاکستان پیپلز پارٹی نے نگراں وزیراعظم کیلئے سابق چیئرمین پی سی بی ذکاء اشرف اور سابق سینئرسفارتکار جلیل عباس جیلانی کے نام فائنل کئے تھے۔

نگران وزیرِاعظم کے اختیارات

الیکشن ریفارمز ایکٹ 2017ء کے مطابق نگران حکومت کا کام صاف اور شفاف انتخابات کا انعقاد اور روز مرہ کے امور انجام دینا ہے جبکہ نگران حکومت خود کو روزمرہ سرگرمیوں، غیر متنازع، اہم اور عوامی مفاد کے معاملات اور ان اقدامات تک محدود رکھے گی جن کو مستقبل میں آنے والی حکومت واپس لے سکے اس کے پاس کوئی بڑا پالیسی فیصلہ کرنے کا اختیار نہیں۔

نگران حکومت کوئی ایسا فیصلہ یا پالیسی نہیں بنا سکتی جو آئندہ حکومت کے فیصلوں پر اثرانداز ہو۔ نگران حکومت عوامی مفاد کے خلاف کوئی بڑا معاہدہ نہیں کر سکتی۔ نگران حکومت کسی ملک یا بین الاقوامی ایجنسی کے ساتھ مذاکرات کا حصہ نہیں بن سکتی نہ ہی کسی بین الاقوامی معاہدے، بائنڈنگ پر دستخط کر سکتی ہے جب تک کہ ایسا کرنا انتہائی ضروری نہ ہو۔

نگران حکومت تقرریاں، تبادلے یا افسران کی ترقیاں نہیں کر سکتی۔ ایسا صرف عوامی مفاد میں مختصر مدت کے لیے کیا جا سکتا ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے ضروری قرار دیئے جانے پر ہی عوامی عہدہ رکھنے والے افسران کے تبادلہ کیا جا سکتا ہے۔ جبکہ کوئی بھی ایسا اقدام نہیں کر سکتی جوعام انتخابات کی شفافیت پر اثر انداز ہو سکے۔

یہ بھی پڑھیے

نگراں وزیراعظم: اپوزیشن لیڈر اور وزیراعظم ساڑھے بارہ بجے مشترکہ پریس کانفرنس کرینگے

مسلم لیگ (ن) 2018ء کے انتخابات جیتے گی، خواجہ سعد رفیق

 

 

 

 

 

 

 

Spread the love

Comments are closed.

Scroll To Top