تازہ ترین
یورپ، برطانیہ، امریکا،اقوام متحدہ کی صحافی جمال خشوگی کے قتل کی مذمت

یورپ، برطانیہ، امریکا،اقوام متحدہ کی صحافی جمال خشوگی کے قتل کی مذمت

نیویارک: (11 اکتوبر 2018) اقوام متحدہ،امریکا،برطانیہ،یورپی یونین اور دیگر ممالک اور تنظیموں نے سعودی عرب کے صحافی جمال خشوگی کے قتل کی مذمت کی ہے۔ امریکی انٹیلی جنس نے سعودی انٹیلی جنس ٹیم کے ارکان کے درمیان خشوگی کو مارنے سے متعلق گفتگو بھی سنی ہے۔ امریکی نائب صدر نے پیشکش کی ہے کہ وہ تحقیقات میں مدد کیلئے ایف بی آئی کی ٹیم ترکی اور ریاض بھیجنے کیلئے تیار ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق امریکا میں مقیم سعودی عرب کے صحافی جمال خشوگی ترکی کے شہر استنبول میں سعودی عرب کے قونصل خانے گئے۔ انہیں اپنی منگیتر کے سفری دستاویزات بنوانے تھے۔ منگیتر کونسل خانے کے باہر گیارہ گھنٹے انتظار کرتی رہی لیکن خشوگی قونصل خانے سے بابر نہیں آئے۔منگیترنے امریکی حکومت اور میڈیا سے رابطہ کیا۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ، اقوام متحدہ، یورپی یونین اور دیگر ممالک نے خشوگی کے قتل کی مذمت کی۔ برطانیہ کے وزیر خارجہ نے مطالبہ کیا کہ سعودی عرب صحافی کے قتل کی وضاحت کرے۔ امریکی نائب صدر مائیک پینس نے پیشکش کی کہ اگر سعودی عرب نے مدد طلب کی تو وہ ایف بی آئی کی ٹیم ریاض اور ترکی بھیجنے کیلئے تیار ہیں۔ترک میڈیا نے سی سی ٹی وی ویڈیو جاری کی۔ سعودی انٹیلی جنس کے پندرہ ارکان نے خشوگی کو سفارتخانے کی عمارت کے اندر قتل کیا اور جسم کے ٹکڑے کرکے اسے تلف کردیا۔ اسی روز سعودی انٹیلی جنس ارکان مختلف ممالک روانہ ہوگئے۔

یہ بھی پڑھیے

صحافی کی گمشدگی ترکی اور سعودیہ تعلقات کیخلاف سازش ہو سکتی ہے، ترکی

جمال خشوگی کے اغوا اور قتل کی رپورٹس من گھڑت ہیں، شہزادہ خالد بن سلمان

Comments are closed.

Scroll To Top